تازہ ترینشعروشاعری

ہماکے پر تو نہ کا ٹو

ہماکے پر تو نہ کا ٹو

تحریر ہماؔ حیات چترال

کبھی غیرت بنی بنیاد کبھی پردے کی شریعت پر
بنی ہوں کیوں تماشا میں اپنی چھوٹی خطاؤں سے
کبھی چہرہ جلایا ہے کبھی زندہ کیا در گور
بنائے پھر فسانے بڑے دلچسپ اداؤں سے
یہ سب ماضی کی با تیں تھیں اب میر ا حال تو جا نو
نہ ہی اب خو ف آتا ہے مجھے ان سب سزاؤں سے
نہ ہی کمزور ہوں میں اب نہ ہی مایوس ہے یہ دل
کہ اب سب کچھ جھلکتا ہے عقابی نگا ہوں سے
اتری رحمت تیرے گھر پر میں جب ہوئی پیدا
سجا تب سے تیرا انگن بڑے خوش رنگ بہاروں سے
کہیں ممتا کی صورت ہوں کہیں بیٹی کی صورت ہوں
تجھے جنت بھی ملتی ہے میری ہی چند دعا ؤں سے
ہما ؔ کے پر تو نہ کا ٹو اسے پر واز کر نا ہے
بہت کچھ سیکھنا ہے اب اسے انہی فضا ؤں سے

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
دوسروں کے ساتھ اشتراک کریں

متعلقہ خبریں/ مضامین

اترك تعليقاً

error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔
إغلاق