ممبر ڈسٹرکٹ کونسل چترال محمد حسین کی طرف سے سلیم خان ایم پی اے کے خلاف الزامات سراسر جھوٹ اور منگھڑٹ کہا نی ہے۔ترجمان پی پی پی چترال – Chitral Express

صفحہ اول | تازہ ترین | ممبر ڈسٹرکٹ کونسل چترال محمد حسین کی طرف سے سلیم خان ایم پی اے کے خلاف الزامات سراسر جھوٹ اور منگھڑٹ کہا نی ہے۔ترجمان پی پی پی چترال
Premier Chitrali Woolen Products

ممبر ڈسٹرکٹ کونسل چترال محمد حسین کی طرف سے سلیم خان ایم پی اے کے خلاف الزامات سراسر جھوٹ اور منگھڑٹ کہا نی ہے۔ترجمان پی پی پی چترال

چترال(نمائندہ چترال ایکسپریس)گذشتہ دنوں ممبر ڈسٹرکٹ کونسل چترال محمد حسین نے ارکاری میں جاکر سلیم خان ایم پی اے کے خلاف جو ہرزہ سرائی کی ہے وہ سراسر جھوٹ اور من گھڑت کہا نی ہے۔ان کی ارکاری میں جاکر ٹورنامنٹ منعقد کرنے کا مقصد ہی ارکاری کے سادہ لوح عوام کو بے وقوف بنانے کے سوا اور کچھ نہیں ہے حالانکہ ان کا حلقہ گرم چشمہ ہے۔ان خیالات کا اظہارترجمان ضلع چترال قاضی فیصل احمد اور انفارمیشن سیکرٹری تحصیل چترال خوش محمد نے ایک مشترکہ اخباری بیان میں کیا۔اُنہوں نے کہا کہ سلیم خان ایم پی اے کو پچھلے پانچ سال کے ٹنیور میں صوابدیدی فنڈ کل ملاکر12کروڑ روپے ملے جبکہ محمد حسین 86کروڑ روپے بتارہے ہیں جوکہ سفید جھوٹ ہے،اوریہ فنڈ چترال کے تمام علاقوں میں یکساں ترقیاتی کاموں پر لگے ہیں۔اُنہوں نے کہا کہ صرف محمد حسین نے پچھلی حکومت میں سلیم خان کا چمچہ بن کر گبور میں ایک گودام کے تعمیر کیلئے5لاکھ اور دوپلوں کی تعمیر کے لئے6لاکھ روپے پراجیکٹ لیڈر بن کرہڑپ کرچکے ہیں۔جن کا ثبوت ٹی ایم اے چترال کے پاس ہے۔باقی پیسے تو لوگوں کے فلاح وبہبود پر خرچ ہوئے۔محمد حسین خود ممبر ڈسٹرکٹ کونسل بننے کے بعد تحصیل لٹکوہ کے سادہ لوح لوگوں سے نوکری دینے کے بہانے ابھی تک 26افراد سے دودولاکھ روپے رشوت لے چکا ہے۔وہ نہ ہی ان غریب لڑکوں کو نوکری دلواسکا اور نہ ہی رقم واپس کررہا ہء۔جب لوگ اپنے پیسے واپس کرنے کو کہتے ہیں تو یہ ان کو ڈرا دھمکاتا ہے۔اورجب سے وہ ممبر بناہے تب سے ہر جگہ لوگوں سے دھوکہ دہی اور فراڈ کے علاوہ اور کچھ بھی نہیں کیا ہے اور وہ اپنے صوابدیدی فنڈ کا ایک روپیہ بھی ابھی تک لٹکوہ میں نہیں لگا سکا ہے۔ترقیاتی فنڈ ٹھیکہ داروں سے ملی بھگت کرکے ہڑپ کرچکا ہے۔اُنہوں نے الیکشن کمیشن اور سیکرٹری لوکل گورنمنٹ سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ محمد حسین کے خلاف قانونی کاروائی کرتے ہوئے ان کو نااہل قرار دے اور کاروائی کرکے لٹکوہ کے غریب لوگوں کے52لاکھ روپے ان کو واپس کروادے۔اُنہوں نے کہا محمد حسین نے گبور ایریا کے سرکاری چراگاہوں کے اوپر قلنگ کے نام پر گجر لوگوں کے مویشیوں کے اوپر سالانہ50لاکھ روپے کا غنڈہ ٹیکس وصول کرکے اپنے جیپ میں ڈالتاہے۔اس سال SMBRپشاور کے ارڈر تھا کہ کوئی بھی فرد سرکاری چراگاہوں کے اوپر کوئی ٹیکس وصول نہیں کرسکتا۔بلکہ ایک کیس میںSMBRکا باقاعدہ آڈر ہے کہ اگر محمد حسین نے سرکاری چراگاہ میں جاکر کوئی ٹیکس وصول کیا ہے تو ڈسٹرکٹ ایڈمنسٹریشن ان سے ریکوئری کرے مگر ضلعی انتظامیہ کی نااہلی اور ناکامی ہے کہ وہ نہ ہی مال مویشی گبور سے نکال سکے اور نہ ہی محمد حسین سے لوگوں سے وصول کردہ غنڈہ ٹیکس واپس لے سکے۔اُنہوں نے حکومت سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ محمد حسین نے قلنگ کے نام پر ابھی تک کروڑوں روپے ہڑپ کرچکے ہیں ان کو ریکوئر کرکے ان کے خلاف قانونی کاروائی کرے۔اُنہوں نے مزید کہا کہ چترال میں کچھ سیاسی لوگ سلیم خان کے مقبولیت سے خائف ہوکر محمد حسین کو بطور محرہ استعمال کرتے ہیں۔ان کے خلاف پیپلز پارٹی چترال بہت جلد 10کروڑ روپے ہرجانے کا کیس عدالت میں داخل کرنے والا ہے۔سلیم خان ایک مخلص اور صاف ستھرا سیاستدان ہے۔گذشتہ دس سالوں کے اپنے دور اقتدار میں اُنہوں نے نہ کسی سے رشوت طلب کیا ہے اور نہ ہی کسی کوئی کمیشن لیا ہے۔وہ دن رات چترال کے لوگوں کی بے لوث اوربلاتفریق خدت کرتے آرہا ہے۔اس لئے چترال کے عوام اور پیپلز پارٹی کے جیالے ان سے بے پناہ محبت کرتے ہیں اور مسلسل دوبار ان کو ایم پی اے بنایا۔اُنہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی چترال میں ایک مضبوط سیاسی جماعت سلیم خان کی قیادت کی وجہ سے بن چکا ہے اور انشاء اللہ 2018کے الیکشن میں چترال کے تینوں سیٹیں جیت کر سیاسی مخالفین کو سبق سیکھائینگے۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
دوسروں کے ساتھ اشتراک کریں
Qashqar Gemstone Testing Lab

یہ خبر بھی پڑھیں

ڈپٹی کمشنر چترال کے دفتر میں عوامی شکایات کی فوری ازالے کے لئے قائم کردہ کمپلنٹ ریڈرسل (سی آر سی ) کا افتتاح

چترال (نمائندہ چترال ایکسپریس) کمشنر ملاکنڈ ڈویژن سید مظہر الاسلام شاہ نے ڈپٹی کمشنر چترال ...