ریشن پاور ہاوس کے صارفین کو بجلی کی فراہمی،صوبائی حکومت کااحسن اقدام ہیں۔صدر انصاف یوتھ ونگ اپر چترال محمد ہارون – Chitral Express

Premier Chitrali Woolen Products

 ریشن پاور ہاوس کے صارفین کو بجلی کی فراہمی،صوبائی حکومت کااحسن اقدام ہیں۔صدر انصاف یوتھ ونگ اپر چترال محمد ہارون

صدر انصاف یوتھ ونگ اپر چترال محمد ہارون نے ایک اخباری بیان میں کہا ہے کہ  ریشن پاور ہاوس صارفین کی مشکلات کو مدنظر رکھتے ہوئے پیسکو سے بجلی لے کر ریشن پاور ہاوس کے 21ہزار صارفین کو بجلی کی فراہمی یقینی بنانا پاکستان تحریک انصاف کی صوبائی حکومت کا ایک اور انقلابی اقدام اور چترال کے ساتھ محبت کا ثبوت ہے جس کے لئے پورے چترالی عوام پاکستان تحریک انصاف کی صوبائی حکومت کا شکریہ اداکررہے ہیں۔ اس سے قبل بھی صوبائی حکومت نے چترال سے ایک نشست بھی نہ جیتنے کے باوجودچترال کی تاریخ میں سب سے زیادہ کام کئے ہیں اور اب بجلی کے مسئلے کو حل کرنے کے لئے محکمہ پیسکو سے معاہدہ کرکے کوہ یوسی اور اپر چترال کے لئے بجلی کی فراہمی ممکن بنائی ۔
اُنہوں نے کہا کہ ایم این اے چترال افتخار الدین اپنی ناکامیوں کو چھپانے کے لئے پہلے یہ شوشہ چھوڑا کہ صوبائی حکومت اور محکمہ پیڈو اپنے ٹرانزمیشن لائین پیسکو کو نہیں دے رہے ہیں جبکہ صوبائی حکومت اور پیڈو نے ایک ہفتہ قبل ہی اپنے کھربوں روپے کے انفراسٹریکچر (پول، ٹرانزمیشن لائین اور ٹرانسفرمر) پیسکو کو دئیے تھے ۔ اگر پیڈو اور صوبائی حکومت چترال کے ساتھ مخلص نہ ہوتے تو اپنے کھروبوں روپے کے انفراسٹریکچر کیوں پیسکو کو استعمال کرنے کے لئے دیتے؟ ریشن پاور ہاوس کےصارفین کو بجلی جیسی نعمت کی فراہمی میں صوبائی حکومت کا کلیدی کردار ہے۔صوبائی حکومت کی جانب سے ریشن پاورہاوس صارفین کو ملنے والی بجلی پر ایم این اے چترال کو سیاست بازی سے گریز کرکے اپنی گزشتہ ساڑھے چار سالہ کارکردگی عوام کے سامنے رکھنا ہوگا۔
اُنہوں نے کہا کہ ایک اور اہم بات جس کی جانب توجہ مرکوزکرنے کی ضرورت ہے وہ یہ کہ گولین گول پاور ہاوس سے 30میگاواٹ بجلی پیداہورہی ہے جبکہ دیر میں ٹرانزمیشن لائین ابھی تک نہیں بچھائے گئے جس کی وجہ سے وہ 30میگاواٹ فی الوقت ناقابل استعمال ہے ۔ لہذا محکمہ پیسکو اور واپڈا باامر مجبوری بھی یہ بجلی ریشن پاور ہاوس کے صارفین کو دے رہے تھے البتہ پیڈو اور پیسکو کے درمیان بجلی کے فی یونٹ نرخوں پر اتفاق نہیں ہوا تھا پیسکو کا ریٹ عام صارفین کے لئے فی یونٹ 8روپے ہیں اور اگر 200یونٹ سے زائد استعمال کی جائے تو 14روپے فی یونٹ تک چلی جاتی ہے اس کے برعکس پیڈو 1روپے 50پیسہ فی یونٹ کے حساب سے بجلی فراہم کررہے ہیں ۔جس کی وجہ سے معاملات میں تعطل تھی لیکن وزیر اعلی خیبر پختونخوا پرویز خٹک  نے مداخلت کرکے جلد ازجلد لوگوں کو بجلی کی فراہمی کو یقینی بنایا اور ریٹ کا مسئلہ بعد میں حل کرنے کی ہدایت دی ۔
جس کے لئے عوام اپر چترال اور کوہ وزیر اعلی خیبر پختونخواہ اور صوبائی حکومت کا مشکور ہے ۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
دوسروں کے ساتھ اشتراک کریں

یہ خبر بھی پڑھیں

پرویز مشرف الیکشن 2018میں چترال سے قومی اسمبل کی نشست کے امیدوار ہونگے کاغذات نامزدگی مکمل، بیان حلفی کا انتظار

چترال ( محکم الدین ) سپریم کورٹ آف پاکستان کی طرف سے سابق صدر پاکستان ...


دنیا بھر سے