ڈپٹی کمشنر چترال خورشید عالم کے زیر صدارت ضلعی امن کمیٹی کااجلاس،چترال کودوسرے علاقوں کی نسبت سے امن وامان کو خطرہ لاحق نہیں  – Chitral Express

Premier Chitrali Woolen Products

ڈپٹی کمشنر چترال خورشید عالم کے زیر صدارت ضلعی امن کمیٹی کااجلاس،چترال کودوسرے علاقوں کی نسبت سے امن وامان کو خطرہ لاحق نہیں 

چترال (نمائندہ چترال ایکسپریس) جمعرات کے روز ڈپٹی کمشنر چترال خورشید عالم کے زیر صدارت منعقدہ ضلعی امن کمیٹی کے اجلاس میں ضلعے کے اندر امن وامان کی صورت حال پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا گیا کہ یہاں دوسرے علاقوں کی نسبت سے امن وامان کو خطرہ لاحق نہیں ہے جہاں مسلک کے لحاظ سے ہم آہنگی پائی جاتی ہے اور کالاش اقلیت بھی پرسکون زندگی گزار رہے ہیں جن کو تمام حقوق حاصل ہیں۔ چترال ٹاسک فورس کے کمانڈنٹ کرنل معین الدین ، ایڈیشنل ڈی سی منہاس الدین ، ڈی پی او کے نمائندے ، محکمہ جنگلات کے ڈی ایف او شوکت فیاض، چترال چیمبر آف کامرس کے صدر سرتاج احمد خان ، مختلف سیاسی جماعتوں کے رہنما شیخ الحدیث مولانا حسین احمد، مولانا سلامت اللہ، فضل ربی جان، مولانا محمود الحسن ، صاحب نادر ایڈوکیٹ،محمد حکیم ایڈوکیٹ ، عبدالولی خان ایڈوکیٹ، تجاریونین کے صدر شبیر احمد، جنرل سیکرٹری حافظ سراج احمد، اسماعیلی کونسل کے سردار حکیم، کالاش اقلیت کے نمائندے عمران کبیر ، سیف اللہ جان ، عیسائی اقلیت کے ربیکا اور دوسروں نے شرکت کی۔ اس موقع پر حاضرین نے اس بات پر زور دیاکہ امن وامان کی اگر خطرہ درپیش ہے تو محکمہ سرکاری محکمہ جات خصوصاً پیسکو اور پیڈو کی طرف سے ہے جوکہ غیر ضروری لوڈ شیڈنگ، ناقص سروس ڈلیوری اور بغیر میٹر ریڈنگ کے بل بھیج کر صارفین کا جینا حرام کیا ہے جبکہ خشک سالی کی وجہ سے بھی ضلع کے طول وعرض میں عوام میں شدید اضطراب میں ہیں۔ڈپٹی کمشنر چترال نے کہاکہ مختلف مقامات پر ابنوشی اور ابپاشی کے لئے پانی کی دستیابی ممکن بنائی گئی ہے جبکہ بجلی کے مسائل متعلقہ اداروں کے ساتھ اٹھائے جائیں گے۔ انہوں نے بونی کے قریب ایس آر ایس پی کے بجلی گھر کی بندش اور محکمہ وائلڈ لائف کے ساتھ شجرکاری کا کام کرنے والے نگہبانوں کے نو مہینوں کے تنخواہوں کی عدم ادائیگی کا بھی نوٹس لیا۔ کمانڈنٹ چترال ٹاسک فورس معین الدین نے کالاش اقلیتوں کی طرف سے کئے گئے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہاکہ سرحد کے ساتھ واقع افغان علاقوں سے آنے والے دراندازوں کو روکنے کے لئے ٹھوس اقدامات کئے گئے ہیں جوکہ یہاں حملہ آؤر ہوتے رہے ہیں اور اس سلسلے میں مقامی باشندوں کو فوج کی ہدایات پر عمل کرنا چاہئے۔
اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
دوسروں کے ساتھ اشتراک کریں

یہ خبر بھی پڑھیں

پی ٹی آئی کی شاندار کامیابی کی بدولت اُس کے حصے میں آنے والی خواتین مخصوس نشستوں سے چترال کو محروم نہ رکھا جائے ۔ سفینہ بی بی

چترال ( محکم الدین ) بونی سے پاکستان تحریک انصاف کی معروف خاتون رہنما آواز ...


دنیا بھر سے

error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔