fbpx

زیا دہ گو شت کھانیوالوں نے ہسپتال بھر دئیے۔۔۔

لاہور(نیٹ ڈیسک) صوبائی دارالحکومت میں ہزاروں لاہوریے عید کے دنوں میں زیادہ گوشت کھانے اور جانوروں کو ذبح کرنے کے دوران چھریاں لگنے اور ٹریفک حادثات کے پیش نظر ہسپتالوں میں پہنچ گئے۔ بتایا گیا ہے کہ درجنوں نوجوان لڑکے تیز رفتاری اور ون ویلنگ کی وجہ سے زخمی ہوگئے۔ 5 ہزار سے زائد شہری مختلف پرائیویٹ ہسپتالوںمیںبھی گیسٹرو‘ ہائی بلڈ پریشر اور بدہضمی کی وجہ سے داخل ہوئے۔ ہسپتال انتظامیہ کے مطابق مختلف ہسپتالوں میں زیادہ تر مریض قربانی کے جانوروں کا گوشت کھانے کی وجہ سے بلڈ پریشر ہائی ہونے کی وجہ سے اور زیادہ مصالحے استعمال کرنے کی وجہ سے آئے۔400 کے قریب ایسے افراد ہسپتالوں میں آئے جو کہ قربانی کے جانوروں کو آبح کرتے وقت چھریاں چاقو لگنے سے معمولی زخمی ہوئے۔ انہیں طبی امداد دے کر ہسپتال سے ڈسچارج کر دیا گیا۔ مشروبات کے استعمال سے مریضوں کا مختلف ہسپتالوں کا ایمرجنسی میں علاج جاری ہے۔ بڑے پیمانے پر مختلف ہسپتالوں میں مریضوں کے رش بڑھنے کی وجہ سے سینئر ڈ اکٹروں کی غیر حاضری ہے۔ بیشتر مریضوں کے لواحقین وارڈ میں ڈاکٹروں نرسوں اور سٹاف کو ڈھونڈتے رہے۔ ہسپتال کی انتظامیہ کے مطابق ڈاکٹروں کی غیر حاضری اور ہسپتالوں میں مریضوں کے رش بڑھنے کی وجہ سے انکوائری لگا دی گئی اور مریضوں کے لواحقین کی طرف سے شکایات کو دور کرنے کی کوششیں کی جارہی ہے۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

اترك تعليقاً

إغلاق