fbpx

گرم چشمہ روڈ ہر قسم کی ٹریفک کے لئے بند

گرم چشمہ (نمائندہ چترال ایکسپریس) گزشتہ سال سیلاب کے نتیجے میں گرم چشمہ روڈ تقریبا 40 فی صد تباہ ہوچکا تھابعد ازاں ایف ڈبلیو او اور غریب عوام کی انتھک محنت کے بعد گرم چشمہ روڈ دو مہینے کے اندر عارضی طور پر بحال ہوگیا تھاعوام نے حکومت اور سیاسی قیادت پر بھروسہ کرتے ہوئے روڈ عارضی طور پر اپنی مدد آپ کے تحت بحال کیا تھا مگر ایک سال گزرنے کے باوجود گرم چشمہ روڈ کی مکمل بحالی پر کوئی کام نہیں کیا گیا، جس حالت میں عوام اور ایف ڈبلیو او نے اس روڈ کو عارضی طور پر بحال کیا تھا انتظامیہ نے اس عارضی بحالی کو مکمل سمجھ کر ایک سال تک علاقے کے عوام کو تکلیف دیتا رہا ایک انچ کا کام گرم چشمہ روڈ پر نہیں ہوا، امسال سردیوں میں برف باری بھی نہیں ہوئی جس کی وجہ سے برفانی تودے جو کہ اکثر و بیشتر گرم چشمہ کے لوگوں کے لئے عذاب کا سبب بن جاتے تھے اس سے وہ کم از کم بچے رہے، گرمیاں شروع ہوتے ہی بارشوں کی وجہ سے کچھ مٹی کے تودے گرنے سے روڈ بند ہوا تو ضلعی انتظامیہ نے روڈ دوبارہ کھول دیا مگر مستقل بنیادوں پر اس روڈ پر کام نہیں ہوا، حالیہ دو دنوں کے اندر گرمی کی شدت میں اضافہ ہوا اور گرم چشمہ روڈ دریا برد ہوگیاذمہ دار صرف تماشا دیکھ رہے ہیں گرم چشمہ کے عوام کی بے بسی کا تماشا، بے چارگی کا تماشا، حالانکہ بہت ہی کم خرچے پر گرم چشمہ روڈ کو بچایا جاسکتا تھاوہاں کے عوام کو ایک مستقل اور شدید عذاب سے بچانے کے بجائے ہماری قیادت اور انتظامیہ صرف تماشا دیکھ رہی ہے۔یاد رہے کہ گرم چشمہ پورے ضلع میں واحد ایسا علاقہ ہے جہاں سے ضلعی حکومت کو ریونیو کی مد میں سالانہ کروڑوں روپے ملتے ہیں گرم چشمہ میں کاشت کی جانے والی آلو پورے ضلع کی واحد ریونیو دینے والی فصل ہے مگر سب سے زیادہ سوتیلی ماں کا سلوک بھی گرم چشمہ کے ساتھ ہی کیا جاتا ہے اس سے بڑھ کر موجودہ ایم پی اے سلیم خان کا تعلق بھی گرم چشمہ سے ہے حیرت کی بات ہے کہ انہیں بھی پورے سال گرم چشمہ روڈ کی ناگفتہ بہہ حالت نظر نہیں آئی۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

اترك تعليقاً

error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔
إغلاق