Chitral Express

Chitral's #1 Online News Website in Urdu | Politics, Sports, Islam

آوی بجلی گھر اور لوگوں کا استحصال۔۔۔

راحت کاظمی ؔ اوی۔۔۔۔۔۔۔

ہمارے ہاں ترقیاتی کاموں میں اقراباء پروری اور ذاتی مفادات کو بروئے کار لانا کوئی نئی بات نہیں لیکن کچھ حکومتی کام بھی ایسے ہیں جو بیک وقت حکومت اور این جی او کے منہ پر ایک معیاری طمانچہ ہے۔ اس سے ملتی جلتی کہانی آوی ( جو کہ بونی سے چند کلومیٹر دور ہے ) میں زیر تعمیر پاور ہاوس کی بھی ہے ، جو صوبائی حکومت کے فنڈز سے مقامی این جی او ( اے کے ار ایس پی ) کے زیر نگرانی تکمیل ہونا تھی لیکن اس کے سر پرستی آوی کے چند با اثر لوگوں کے پاس تھی جن میں ایک سابقہ امیدوار بھی ہے، اس پاور ہاوس کی قوت ماہرین کے مطابق 300 گھرانوں تک تھی چونکہ آوی 279 گھرانوں پر مشتمل ہے اُن میں سے 32 گھرانے ایسے بھی تھے جو بلدیاتی انتخابات میں مذکورہ امیدوار کے مطابق اُس کے مخالفین تھے ۔ لیکن ان یہ سزا اس صورت میں بھگتنا پڑی کہ بنا کسی مجبوری کے اپنا سیاسی اثرو رسوخ استعمال کرتے ہوئے ان مذکورہ 32 گھرانوں کو بجلی سے محروم کر رہا ہے جو پی ٹی آئی کی تبدیلی اور ( اے کے آر ایس پی ) کی غیر جانبداری پر ایک ان مٹ دھبہ ہے اس حالیہ واقعے پر عوام آوی کروئے گلوغ حکومت وقت اور ہائیکورٹ سے اپیل کرتی ہے کہ اس واقعے کی جلد از جلد انکوائری کی جائے اور ناکردہ گناہوں کی سزا بھگتنے والی عوام کو ان کا حق دے دیا جائے تاکہ کوئی ناحوشگوار واقعہ پیش نہ آئے۔۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

دیگر خبروں میں

Copyright © All rights reserved. | Newsphere by AF themes.
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔