جامعہ چترال ڈریسنگ کوڈ کے حوالے سے چھپنے والی من گھڑت خبر کی وضاحت – Chitral Express

کمرشل اشتہارات/ اعلانات

صفحہ اول | تازہ ترین | جامعہ چترال ڈریسنگ کوڈ کے حوالے سے چھپنے والی من گھڑت خبر کی وضاحت

جامعہ چترال ڈریسنگ کوڈ کے حوالے سے چھپنے والی من گھڑت خبر کی وضاحت

چترال(نمائندہ چترال ایکسپریس)جامعہ چترال کی انتظامیہ چترال کے مختلف آن لائن اخبارات میں چھپنے والی ڈریسنگ کوڈ کے حوالے سے خبر کی تردید کرتی ہے۔پبلک ریلشن آفیسر کی طرف سے جاری ہونے والے ایک پریس ریلیز کے مطابق جامعہ چترال ملک کی دیگر جامعات کی طرح اپنی ثقافتی وتہذیبی روایات پر یقین رکھتی ہے۔اور جامعہ میں اس سلسلے میں طلباو طالبات اس کی پاسداری کررہے ہیں۔جامعہ چترال کے حوالے سے من گھڑت خبروں کا سلسلہ بند ہونا چاہئیے۔جامعہ اس سلسلے میں تادیبی قانونی کارروائی کا حق محفوظ رکھتی ہیں۔جامعہ چترال میں تمام سیاسی تنظیموں پر سپریم کورٹ آف پاکستان کے حکم کے مطابق پابندی ہے۔جامعہ چترال تمام تعلیمی وانتظامی سرگرمیوں کے حوالے سے باقاعدہ نوٹفیکشن جاری کرتی ہے۔اس لیے جب تک باقاعدہ نوٹیفیکشن نہ ہو،جامعہ چترال کی طرف سے کوئی خبر شائع نہ کی جائے۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
دوسروں کے ساتھ اشتراک کریں

یہ خبر بھی پڑھیں

موجودہ مہنگائی کے تناسب سے پنشن میں 100فیصداضافہ کیاجائے۔آل پاکستان پنشنرزایسوسی ایشن صوبائی صدر فدامحمددرانی

چترال(نمائندہ چترال ایکسپریس)آل پاکستان پنشنرزایسوسی ایشن کے صوبائی صدرخیبرپختونخوا فدامحمددرانی نے چترال میں منعقد ایک ...


دنیا بھر سے

error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔