fbpx

تین روزہ شندور پولوفیسٹول فائنل میچ چترال کی شاندارکامیابی کے ساتھ اختتام پذیر

چترال ( نمائندہ چترال ایکسپریس) تین روزہ شندور پولوفیسٹول فائنل میچ چترال کی شاندارکامیابی کے ساتھ اختتام پذیرہو گیا.اس میچ کےساتھ چترال کو چھٹی مرتبہ مسلسل شندور پولو فیسٹول کا فائنل جیتنےکا اعزاز حاصل ہوا.اس میچ کو دیکھنے کیلئے وزیر اعظم پاکستان عمران خان کی آمد کی توقع کی جارہی تھی اور انتظامات بھی کئے گئے تھے جبکہ ان کی آمد منسوخ ہونے کے بعد کور کمانڈر ایلیون کور لفٹننٹ جنرل شاہین مظہر محمودمہمان خصوصی تھے اس موقع پر منسٹرٹورزم عاطف خان ،ایم این اے چترال مولانا عبدالاکبرچترالی ،مولانا ہدایت الرحمن, چیرمین ڈیڈک چترال وزیرزادہ اور ڈسٹرکٹ ناظم مغفرت شاہ بھی موجود تھے۔فائنل میچ میں گلگت بلتستان اورچترال کی ٹیموں نے شاندارکھیل کا مظاہرہ کیا اورزبردست مقابلے کے بعد پہلے ہاف میں چترال ٹیم نے گلگت بلتستان سے دو کے مقابلے میں پانچ گولوں کی برتری حاصل کی . کھیل کے دوسرے ہاف میں گلگت نےزبردست حملے کئے اور سکور برابر کر دیا جس پر گلگت کی کامیابی کے امکانات نظر آگئے تھے لیکن چترال ٹیم نے گولوں کی اس برابری کو زیادہ دیر برقرار رہنے نہیں دیا اور گلگت بلتستان کی طرف سے ایک اور گول کے باوجود ہمت نہیں ہاری. اور میچ ختم ہونے تک سکور چھ تک پہنچا کر گلگت بلتستان کوپانچ کے مقابلے میں چھ گولوں سے شکست دے کرچھٹی مر تبہ اپنے سابقہ ٹائٹل کا کامیابی سے دفاع کرتے ہوئے ٹرافی اپنے نام کر لی ۔فائنل میچ میں پولو کے نوجوان کھلاڑی اظہار علی خان نے پانچ گول کرکے مین آف دی میچ کے حقدار ٹھہرے۔شندور فیسٹول میں اس مرتبہ تماشائیوں کی غیر معمولی تعداد موجود تھی . جن میں ملکی اور غیر ملکی سیا حوں کی بڑی تعداد گلگت بلتستان اور چترال کے تماشائی مردو خواتین موجود تھے ۔شندور فیسٹول میں اس مرتبہ وزیر اعظم کی آمد کا چترال اور گلگت کے لوگ انتظارکر رہے تھےاس لئے بڑی تعداد میں سکیورٹی کے انتظامات کئے گئے تھے لیکن عین موقع پر وزیر اعظم کی آمد منسوخ ہونے پر شندورفیسٹول کے تماشائیوں اورچترال کے لوگوں کو انتہائی مایوسی ہوئی جبکہ دوسری طرف بھاری فنڈ انتظامات میں ضائع کئے گئے اور وزیراعظم کی آمد بھی نہ ہو سکی ۔درین اثنا چترال کے عوامی حلقوں نے چترال اے ٹیم خصوصا شہزادہ سکندر الملک کو شندور فیسٹول کے فائنل میچ میں کامیابی پر مبارکباد دی ہے . اور کہا ہے . کہ شہزادہ سکندرالملک کی ٹیم کیپٹین نامزدگی درست ثابت ہوئی . کیونکہ چترال اپنا سابقہ ٹائٹل برقرار رکھنےمیں کامیاب ہوا .فیسٹول کے دوسرے دن چترال سی اور گلگلت سی کے پولوٹیموں کے مابین کھیلا جانے والا کھیل گلگت نے جبکہ چترال بی اور گلگت بی کے درمیان کھیلا جانے والا سنسنی خیز مقابلے کے بعد چترال بی نے جیت لیا۔چترال بھی ٹیم کی قیادت علی قعلی خان نے کی۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ خبریں/ مضامین

إغلاق