fbpx

کالاش ویلی بمبوریت میں گذشتہ دنوں کے دوران کئی دکانوں میں چوری کی وارداتیں

چترال ( محکم الدین ) کالاش ویلی بمبوریت میں گذشتہ دنوں کے دوران کئی دکانوں میں چوری کی وارداتیں ہوئی ہیں ۔ اور دکانداروں کو ہزاروں روپے کا نقصان پہنچایا گیا ہے ۔ نامعلوم چور رات کے وقت مختلف مقامات پر دکانوں کے تالے توڑ کر سامان اور نقدی چوری کرتے ہیں ۔ اور ابھی تک مبینہ طور پردس دکانوں میں چوری کی وارداتیں ہوئی ہیں ۔ جس سے دکانداروں کو بہت زیادہ نقصان پہنچا ہے ۔متاثرین میں مُلا کالاش ، وقار احمد ، صدام ، اعجاز ، حسین ، شریف احمد ، نور محمد ، قادر احمد ، تنویر احمد اور گجر برادری کا ایک دکاندار شامل ہے ۔ متاثرین نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ دس دن پہلے دو دکانوں میں چوری کی واردات ہوئی تھی ۔ اورچور دکان کے تالے توڑ کر اشیاء خوردو نوش ، سگریٹ اور نقدی لے گئے تھے ۔ جسے پولیس تھانہ بمبوریت کے نوٹس میں لایا گیا ۔ تاہم ایک ہفتہ گذرنے کے باوجود اس حوالے سے کوئی پیش رفت نہیں ہوئی ۔ نہ کسی کو پکڑا گیا ۔ اور نہ مال مسروقہ برآمد کئے گئےاس پر چوروں کو تقویت ملی اور انہوں نے مزید تالے توڑ کر آٹھ دکانوں پر ہاتھ صاف کیا اور دکانداروں کو اشیاء خورودونوش اور کیش کی صورت میں ہزاروں کا نقصان پہنچایا ۔ دکانداروں نے کہا ۔ کہ آئے روز کی ڈاکہ زنی اور چوری سے علاقے میں خوف و ہراس پھیل رہی ہے ۔ جس کا پولیس کی طرف سے سد باب ہونا چاہیے ۔ کیونکہ بمبوریت سیاحتی علاقہ ہے یہاں ہزاروں لوگ سیاحت کی غرض سے آتے ہیں ان چوروں کو اگر گرفتار کرکے سزا نہ دی گئی ۔ تو بہت بڑے نقصان سے دوچار ہونا پڑے گا جو کہ علاقے کی بدنامی کا باعث ہو گا ۔انہوں نے کہا کہ پولیس اس بات پر زور دے رہی ہے کہ ہر دکاندار اپنے دکان کی حفاظت کیلئے دکان ہی میں سوئے جو کہ سب کیلئے ممکن نہیں ہے ۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ چوروں کو بے نقاب کیا جائے اور اُن کو قرار واقعی سزا دے کر آیندہ کیلئے علاقے کو محفوظ بنایا جائے ۔ اس حوالے سے جب تھانہ بمبوریت میں معلومات حاصل کرنے کی کوشش کی گئی ۔ تو اُن کا کہنا تھا ۔ کہ وہ اس حوالے سے تفتیش کر رہے ہیں اور بہت جلد ان چوروں کو گرفتار کیا جائے گا ۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ خبریں/ مضامین

إغلاق