fbpx

ایس آر ایس پی نےسیلاب کی زد میں آنے والی وادی گولین کے پانچ مختلف دیہات کو بجلی کی بحالی شروع کردی۔

چترال (نمائندہ چترال ایکسپریس) اس سال جولائی میں گلیشیر کے پھٹ جانے سے آنے والی سیلاب کی زد میں آنے والی وادی گولین کے پانچ مختلف دیہات کو بجلی کی بحالی شروع ہوگئی جس پر سرحد رورل سپورٹ پروگرام (ایس آر ایس پی) نے چالیس لاکھ روپے خرچ کی اور 5کلومیٹر پر ٹرانسمیشن لائن بچھا نے، 3ٹرانسفارمر اور 58عدد کھمبے لگانے کا کام مکمل کیا۔ ایک خصوصی تقریب میں ڈپٹی کمشنر لویر چترال نوید احمد نے بجلی کی بحالی کا افتتاح کیا جس میں ادارے کے چیف ایگزیکٹیو افیسر شہزادہ مسعود الملک ڈسٹرکٹ پروگرام منیجر طارق احمد اورپراجیکٹ منیجر (PATRIP)،خادم اللہ بھی موجود تھے۔ اس موقع پر اپنے خطاب میں شہزاہ مسعود الملک نے کہاکہ 2016ء میں ایس آرایس پی نے گولین میں دو میگاواٹ پیدواری صلاحیت کا ہائیڈرو پاؤراسٹیشن تعمیر کیا تھا جس سے چترال شہرکو پیسکو کے ذریعے بجلی سپلائی ہوتی تھی جبکہ اس بجلی کی قیمت پیسکواورپیڈو کے ذمے واجب الادا ہیں اور یہ کیس حکومت کے ساتھ اُٹھایا گیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ گولین کے دومیگاواٹ بجلی گھر سے زائد بجلی کو کمرشل یونٹس کو دیا جائے گا جس سے سوشل سیکٹر کی ترقی کا باعث ہوگا۔ چیف ایگزیکٹیو افیسر نے ادارے کے ساتھ تعاون کرنے پر صوبائی حکومت کا شکریہ اداکرتے ہوئے کہاکہ اس کے تعاون سے جنوبی وزیرستان سے لے کر چترال تک ترقیاتی کام شرو ع کرنے کے قابل ہوئےاوراس ادارے کی سرگرمیاں حکومت کے لئے ممد ومعاون ثابت ہوں گے۔ ڈپٹی کمشنر نوید احمد نے ایس آر ایس پی کے کام کو سراہتے ہوئے کہاکہ جولائی میں سیلاب کے بعد اس ادارے نے جانفشانی سے کام کرتے ہوئےاس علاقے کی بجلی بحال کردی جس سے 250سے ذیادہ گھرانے مستفید ہوں گے۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ خبریں/ مضامین

إغلاق