تازہ ترین

اپنی صلاحیت کے مطابق چترال میں اپنی ذمہ داریاں احسن طریقے سے انجام دینے کی بھر پور کوشش کرونگا۔ڈی پی او آصف اقبال

چترال ( نمائندہ چترال ایکسپریس ) چترال کے نئے ڈی پی اوآصف اقبال نے کہا ہے ۔ کہ وہ اپنی صلاحیت کے مطابق چترال میں اپنی ذمہ داریاں احسن طریقے سے انجام دینے کی بھر پور کوشش کریں گے ۔ تاہم بشری کمزوریوں سے کوئی بھی انسان مبرا نہیں ہے ۔ چترال ایک نیک نام اور محبت کرنے والے لوگوں کی جگہ ہے ۔ جہاں کے لوگ دوسروں کی عزت کرنا جانتے ہیں ۔ اور عزت کی توقع بھی رکھتے ہیں ۔ انہوں نے کہا ۔ جہاں لوگ اچھے ہوتے ہیں ۔ وہاں ادارے بھی بُرے نہیں ہوتے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعہ کے روز چترال پریس کلب کی وزٹ کے موقع پر صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کیا ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ ہم اپنے دائرے میں رہ کر کام کریں گے ۔ جس میں چترال پریس کلب کا تعاون انتہائی ضروری ہے ۔ کیونکہ میڈیا اور پولیس کا چو لی دامن کا ساتھ ہے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ وہ منشیا ت کے کنٹرول کے حوالے سے اقدامات اُٹھائیں گے ۔ تاہم چترال کے کالاش ویلیز کے علاقے جہاں اقلیت کے لوگ رہتے ہیں ۔ اُن کو اپنے گھروں کی حدود میں اُن اشیاء کو استعمال کرنے پر پریشان نہیں کیا جائے گا ۔ جوکہ اُن کے مذہب میں استعمال کرنا لازمی ہے ۔ انہوں نے کہا ۔ ہم چاردیواری کے تقدس کو کسی صورت پامال کرنے کی اجازت نہیں دیں گے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ چترال پولیس پریس کے ساتھ پہلے سے بہتر تعلقات پر یقین رکھتی ہے ۔ اور چترال پریس کلب کی وزٹ اس سلسلے کی ایک کڑی ہے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ ہم جس معاشرے میں رہ رہے ہیں ۔ اُس میں بعض اوقات پولیس اور پریس دونوں کو مجبوریاں پیش آجاتی ہیں ۔ تاہم ایسی صورت میں بہتر راستے کی تلاش از بس ضروری ہے ۔ تاکہ ریلیشن شپ متاثر نہ ہو ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ چترال کی اپنی ایک دُنیا ہے ۔ جس میں آنے والے آفیسرز پہلے تو بہت خفا ہوتے ہیں ۔ لیکن بعد میں اس علاقے سے جدا ہونا نہیں چاہتے ۔ اس موقع پر صدر پریس کلب ظہیر الدین نے پریس کلب آنے پر آن کا شکریہ ادا کیا ۔ اور کہا ۔ کہ چترال پریس کلب کے تمام ممبران ذمہ داری کے ساتھ رپورٹنگ کرتے ہیں ۔ جس میں مقامی کلچر ، امن و امان ، اور سرحدی سکیورٹی جیسے حساس نوعیت کی خبروں کے سلسلے میں بہت محتاط رویہ اپناتے ہیں ۔ اور یہی ذمہ دار صحافت کی بنیاد ہے ۔ اس موقع پر چترال میں منشیات ، ٹرانسپورٹ کرایوں کو کنٹرول کرنے اور میڈیا کے ساتھ تیزتر معلومات کی شیرینگ کے حوالے سے بات چیت کی گئی ۔ جس پر اُنہوں نے قدم اُٹھانے کی یقین دہانی کی ۔



اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
اظهر المزيد

مقالات ذات صلة

اترك تعليقاً

إغلاق