حمیدالرحمن حقی

سورووغ ” میرا بچپن اور چائلڈ ابیوز”

حمید الرحمن حقی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چائلڈ ابیوز یا بچوں کا استحصال اس کو کھا جاتا ھے که والدین یا بچوں کا دھیان رکھنے والے افراد ان کو جسمانی تکلیف شدید اعصابی یا جسمانی نقصان پهنچائیں….اگر ھم چاھتے ھیں که معاشرے میں تشدد ختم ھو جاۓ تو یه بچوں کا استحصاک ختم کرنے سے ھی حاصل ھوگا…… کل ﻓﯿﺲ ﺑﮏ ﭘﺮ کسی دوست نے ویڈیو شئیر کی تھی,ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺁﺩﻣﯽ سکول کے معصوم بچوں اور بچیوں یر ڈنڈوں سے شدید قسم کی تشدد کر رھا تھا پھلے معلوم نھیں تھا ﻭﮦ ﮐﻮﻥ ﻟﻮﮒ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺭﺍ ﻗﺼﮧ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﻧﺎﮎ ﻣﻨﻈﺮ ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﺎ ﻓﺰﯾﮑﻞ ﺭﯼ ﺍﯾﮑﺸﻦ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﺳکتا تھا ﺩﻝ ﮐﯽ ﺩﮬﮍﮐﻦ ﺗﯿﺰ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﻧﺲ ﺗﯿﺰ ﺗﯿﺰ ﭼﻠﻨﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﯾﻌﻨﯽ “ ﻓﺎﺋﭧ ﯾﺎ ﻓﻼﺋﭧ” ﻗﺴﻢ ﮐﺎ ﺭﺳﭙﺎﻧﺲ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺍ۔. اک لمحے تک سوچا که یه سفاک انسان اخر اتنے مقدس اور اعلی پیشے تک کیسے پهنچا….بعد میں جب پته چلا که وه شخص ایک استاد ھونے کیساتھ ایک اعلی ادارے کے سربراه اور MSc in chemistry اور دوسرے مختلف علوم کے ماھر بھی ھیں.تو میری حیرانگی کی انتھا نه رھی…. اس ویڈیو پر ﺍﻥ ﺳﺒﮭﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﮐﺎﻓﯽ ﻣﻠﺘﺎ ﺟﻠﺘﺎ ﺭﺩ ﻋﻤﻞ ﺗﮭﺎ ﺟﻨﮩﻮﮞ ‌ ﻧﮯ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺗﺒﺼﺮﮮ ﻟﮑﮭﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﮐﭽﮫ ﻧﮯ ﮔﺎﻟﯽ ﮔﻠﻮﭺ ﻟﮑﮭﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﻮ ﭘﻮﻟﯿﺲ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ ﺟﮩﺎﮞﺍﺱ ﮐﻮ ﺍﺱ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﯽ ﻗﺮﺍﺭ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺳﺰﺍ ﺩﯼ ﺟﺎﺋﮯ۔ اور میں نے بھی جذبات پر قابو نه رکھ سکا اور گالی گلوچ کیساتھ پولیس کو حواله کرکے کیفر کردار تک پھنچانے کا کمنٹس چڑھا دیا……..ﺍﺏ ﺁﭖ ﺳﻮﭺ ﮐﺮ ﺑﺘﺎﺋﯿﮟﮐﮧ ﺳﺰﺍ ﮐﯿﺎ ﺩﯼ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ؟ ﻣﺰﯾﺪ ﻣﺎﺭ ﮐﭩﺎﺋﯽ؟ ﯾﻌﻨﯽ ﻣﺎﺭﭘﯿﭧ ﮐﯽ ﺳﺰﺍ ﺑﮭﯽ ﻣﺎﺭﭘﯿﭧ؟ یا کچھ اور یا کچھ بھی نھیں….ﺑﭽﮯ جس ﻣﺎﺣﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﭘﻠﺘﮯ ﺑﮍﮬﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﮨﯽ اﻥ ﮐﺎ ﮈﯼ ﻓﺎﻟﭧ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﯾﻌﻨﯽ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺳﺐ ﭨﮭﯿﮏ ﭨﮭﯿﮏ ﭼﻞ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ ﺗﻮ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﯽ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﮔﺮ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﮐﮭﮍﯼ ﮨﻮ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻭﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﺭﺩ ﻋﻤﻞ ﺩﮐﮭﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻣﺎﮞ ﺑﺎﭖ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺳﺘﺤﺼﺎﻝ ﯾﺎ ﺑﺪﺳﻠﻮﮐﯽ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﻧﺴﻞ ﺩﺭ ﻧﺴﻞ ﺳﮯ ﭼﻠﺘﺎ ﺁ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﮨﺮ ﻃﺎﻗﺖ ﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﮯ ﮐﻢ ﻃﺎﻗﺖ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮ ﺩﺑﺎﺗﺎ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﭼﮑﺮ ﮐﺎ ﭘﮩﯿﮧ ﮐﯿﺴﮯ ﺭﮐﮯ ﮔﺎ…..یھاں میرے سکول کا ایک واقعه یاد ا رھا ھے ﯾﮧ ﺍﻥ ﺩﻧﻮﮞ ‌ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﺟﺐ میں اور میرا دوسرا بھائی گاوں کے ایک مقامی سکول ﻣﯿﮟ ﭘﮍﮬﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﮨﻢ ﻟﻮﮒ تیسری پانچویں یاچوتھی چھٹی ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﺗﮭﺎ اور پیدل جانا ھوتا تھا…ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﮨﻢ ﻟﯿﭧ ﮨﻮﮔﺌﮯ ﺍﻭر دیر سے سکول پهنچے۔ ھوا یوں که ھمارا گاوں ( پرواک )پینے اور ابپاشی کے پانی کی قلت کیوجه سے پورے علاقے میں مشھور ھے…کم پانی اور وسیع علاقے کی بنا مقامی ابادی کو سارا سال شدیدپانی کی قلت کا سامنا رھتا ھے.. اور 1903 کے برطانوی مقامی قانون کے تحت ھفتے میں اک بار منٹوں اور گھنٹون کے حساب سے فی گھرانے کو پانی ملتا ھے.. جس کو ھم لوگ اپنے مقامی بولی میں “سوروغ” کھتے ھیں….مقامی پانی کے ترسے لوگ جھاں جاو ھر وقت اس سوروغ کی ھی بات کرتے ھوۓ ملے گے.اور پانی کی باری اتے ھی بچے بوڑھے جوان مرد عورت سب کے سب اپنے اپنے بیلچے وغیره لیکر پانی کیلیے ھاتھ پاوں مارتے ھیں..اور ایک عجیب قسم کے لوگرتھم کے قانون سے بھی مشکل قانون کے تحت اس کا حساب لگا کر ایک دوسرے سے اپنے حصے کا پانی لیتے ھیں. تو ھوا یوں که اس روز رات 01 بجے ھماری پانی کی باری تھی.دادا جی(والد محترم) نے کھانے کے وقت په ھی بتادیا که 1 بجے ھماری سوروغ کی باری ھے.کوئی سونا نھیں… اگر کسی کو سوناھے تو وقت په ضرور اٹھنا… یوں دادا نے گھڑی ساڑھے باره بجےکی الارم په لگا کے سو گئے..کچھ دیر بعد دوسرے افراد بھی سو گئے.. میں اور میرے بھائی 10 یا 11 بجے تک ھوم ورکس کرتے رھے..نیند آئی ھی تھی یا نھیں ٹھیک یاد نھیں امی نے سوروغ کیلیے پھر سے جگا لی..پھر پانی کا وقت ختم ھوگیا تو تقریبا پونے 2 یا 2 بج رھے تھے….. یوں ھم پھر سو گئے….صبح ھمیں سکول بھی جانا تھا…. صبح تقریبا امی بھی لیٹ اٹھی ھوگی جب امی نے ھمیں جگانے کیلیے اواز دی تو سکول اسمبلی کا ٹائم ھو چکا تھا… ھم دونوں (میں اور میرے بھائی) جلدی جلدی یونیفام پھن کے بعیر ناشتے کے بعد سکول چلے گئے. بھاگتے ھوۓ جب ھم سکول پھنچے تو ھماری سانس بھی پھول رھی تھی..ھم خود کو اساتذه کی نظروں سے بچاتے بچاتے جب سکول کے اندر داخل ھوۓ تو ﻭﮨﺎﮞ ﭘﺮ ﭘﺮﻧﺴﭙﻞ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﻻﺋﻦ ﺑﻨﺎﺋﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ ﺩﯾﺮ ﺳﮯ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﭽﻮﮞﮐﯽ. ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺭﯼ ﺑﺎﺭﯼ ﺍﻥ ﮐﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﮈﻧﮉﮮ ﺳﮯ ﻣﺎﺭ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻻﺋﻦ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﺍ ﻟﮍﮐﺎ ﮐﮭﮍﺍ ﺗﮭﺎ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮐﮭﮍﺍ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﮈﻧﮉﺍ ﻟﮕﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺎﺭﯼ ﺁﺋﯽ، ﭘﺮﻧﺴﭙﻞ ﺻﺎﺣﺐ ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﺫﺍﺗﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﮯ، ﻭﮦ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﺑﻮ ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﭼﮭﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﺗﮭﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻧﮩﻮﮞﻧﮯ ﺭﻋﺎﯾﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ، ﻣﯿﮟﻧﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﮭﯿﻼﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﻮﮞﻧﮯ ﺍﺗﻨﯽ ﮨﯽ ﻃﺎﻗﺖ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ‌ ﮈﻧﮉﺍ ﻣﺎﺭﺍ۔ ﻣﯿﺮﺍ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺳﺎ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﺮﺩﯼ ﻣﯿﮟ ‌ ﺑﯿﭻ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﻧﯿﻼ ﭘﮍ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﯽ ﺩﯾﺮ ﺗﮏ ﺍﺱ ﮐﻮ ﮨﻼ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘا ﺗﮭا۔ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﻣﯿﮟ ﺭﻭیا ﮨﻮا تھا ﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ ‌ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﯾﺎﺩ ﮐﺮﮐﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗا ﮨﮯ ﺍﻥ ﺳﺐ ﺑﭽﻮﮞﮐﮯ ﻟﺌﯿﮯ ﺟﻮ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺗﺸﺪﺩ ﺳﮯ ﮔﺬﺭ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺑﮩﺖ ﺳﮯﺳﮑﻮﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﭘﭩﺎﺋﯽﮨﻮﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ میں ﺳﻮﺍﻝ ﭘﻮﭼﮭﻨﺎ ﭼﺎھتا ھوں ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺍﺳﭩﻮﮈﻧﭧ ﮐﻮ ﮈﭘﺮﯾﺸﻦ ﮨﮯ ﯾﺎ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺩﻣﺎﻏﯽ ﻏﯿﺮ ﺣﺎﺿﺮﯼ ﮐﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮨﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﮐﮯ ﻣﺎﺭ ﻟﮕﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﺳﺪﮬﺮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ؟ ﮐﯿﺎ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺷﺎﮔﺮﺩ لیٹ سکول پھنچتا ﮨﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﻭﮦ ﺍﻧﮕﻠﯿﻮﮞﻣﯿﮟ ﻓﭩﮯ ﻣﺎﺭﻧﮯ ﺳﮯ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ؟ ﺍﮔﺮ ﮨﺎﮞ ﺗﻮ ﺍﺱ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺗﺎ ﮐﮧ ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺑﺮﺍ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﺍﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﻧﻈﺮ ﯾﺎ ﺟﻤﻠﮧ ﮨﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﮨﮯ۔ ﺗﺸﺪﺩ ﭘﺮ ﺍﺗﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﯿﺎ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﮯ………
اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

اترك تعليقاً

إغلاق