شعروشاعری

رموز شادؔ ۔۔ ………غزل

رموز شادؔ ۔۔ ارشادا للہ شادؔ ۔ بکرآباد چترال
غزل

Advertisements

نسیم سحر کے لب کھلیں ساعت سعید تو آئیے
یہ نفیس جیسا کایا آندھیوں کے کار تو آئیے

ہمارا راس نہ اٹھائے وہ اپنے راس سے بلند
شاہانہ نگر کو دستور قتال عام تو آئیے

نفاق کی ما حضر سبھی الزام مجھے دیدے
مرے بدولت ہم نشینوں میں تیرا نام تو آئیے

اُسے افسردہ نہ کر دے یہ میری تیز سواگت
میں اب کے سست چلوں وہ شہرہ آفاق تو آئیے

غم زیست، غم روزگار اور غم ہجراں شادؔ
آسودگی سے جو گزرے آہ ایسی شام تو آئیے

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ

اترك تعليقاً

زر الذهاب إلى الأعلى