محمد جاوید حیات

دھڑکنوں کی زبان……’’ غزل‘‘

………..محمد جاوید حیات………..


تنہائی ہے ۔۔چاندنی ہے ۔۔سہانہ موسم ہے ۔۔فضا میں ایک خنکی ہے ۔۔پھر افسردگی ہے ۔۔پھر محبوب کی یادیں ہیں ۔۔پھر خواب ہیں ۔۔پھر پروآز ہے ۔۔جی چاہتا ہے کہ ایک غزل لکھوں ۔۔ایک خوبصورت غزل ۔۔الفاظ پگھلا دیں ۔۔انداز بے مثال ہو۔۔خیال ارفع ہو ۔۔معاملہ بندی ہو ۔۔نزاکت ہو ۔۔سوز ہو ۔۔درد میں ڈوبی ہوئی ہو ۔۔روان ہو ۔۔تغزل ہو ۔۔ترنم ہو ۔۔۔رخسار لکھوں ۔۔لال ہونٹ ،چمکتے دانت لکھوں ۔۔نشیلی آنکھیں لکھوں ۔۔سرو قد لکھوں ۔۔دراز زلف لکھوں ۔۔گوری رنگت لکھوں ۔۔چاہ زقند لکھوں ۔۔تل لکھوں ۔۔ناز و ادا لکھوں ۔۔عشوہ و عمزہ و ادا لکھوں ۔۔پھول رنگت لکھوں ۔۔گداز بدن لکھوں ۔۔مسکراہٹ لکھوں ۔۔اور کیا کیا لکھوں ۔۔۔چہرے پڑھنے لگتا ہوں ۔۔لیکن سب غازے میں لیپے ہوئے مومی نظر آتے ہیں ۔۔بھویں تاؤ دیے ہو ئے ہیں ۔۔لپ سٹک سے ہونٹ لال سرخ ہیں ۔۔چہرے پہ کوئی مسکرا ہٹ نہیں ۔۔ دراززلفیں کٹی ہوئی ہیں ۔۔بدن گداز نہیں بے ڈول ہیں ۔۔الفاظ میں بناوٹ ہیں ۔۔معصومیت نہیں ۔۔چہرے بلیچنگ کریم کے پیچھے چھپے ہوئے ہیں ۔۔چمکدار دانتوں کے اوپر زرد رنگ کے لحاف ہیں ۔ناخن بڑھے ہوئے ہیں ۔۔ٹپس ،بالیاں، انگوٹھے کہیں نہیں ۔۔چال ڈھال میں وقار نہیں ۔۔نوکدار جوتے قدم اٹھانے نہیں دیتے ۔۔پلکیں تاؤ دی ہوئی ہیں ۔۔۔آنکھوں کی نشیلا پن معدوم ہیں ۔۔الفاظ ڈھونتا ہوں ۔۔الفاظ نہیں ملتے ۔۔وزن ،بحر، زمین سب ذھن سے ڈلیٹ ہو جاتے ہیں ۔۔میں گڑیا کو کیا لکھوں ۔۔میں روبوٹ کو کیا لکھوں ۔۔خدا جھوٹ نہ بولوائے ۔۔حسن زمین سے پھر آسمان کی طرف اٹھایا گیا ہے ۔۔بس فطرت کی خوبصورتیاں رہ گئیں تھیں ۔۔وہ بھی مٹتی جارہی ہیں ۔۔درخت کاٹے جارہے ہیں ۔۔پھول مسلے جارہے ہیں ۔۔کھیتوں میں بلڈنگیں بن رہی ہیں ۔۔میدانوں میں کارخانے لگائے جا رہے ہیں ۔۔صحراوں میں روڈ بنائے جارہے ہیں ۔۔دریاؤں پر بند باندھے جارہے ہیں ۔۔چشموں کو پائپوں کے زریعے گھر گھر پہنچائے جارہے ہیں ۔۔نیچر روتی ہے ۔۔میں کیسے غزل لکھوں ۔۔میں کس خوبصورتی کی تعریف کروں ۔۔میرے پاس الفاظ نہیں ہیں ۔۔میرے پاس خیال نہیں ہیں ۔۔بس خوبصورتی کا ماتم ہے ۔۔معصومیت کی یاد یں ہیں ۔۔ ایک آہ ہے ۔۔غزل نما آہ ۔۔ایک درد سوز آرزو مندی ۔۔ایک دھائی ہے ۔۔میں فیشن کیسے لکھوں میں مصنوعیت کیسے لکھوں؟ ۔۔ میں نقل کیسے لکھوں؟ ۔۔پھر اس کو غزل کیسے نام دوں ؟۔۔غزل غالب لکھتا تھا کہ اس کو ایک منظر مل گیا تھا ۔۔تڑپ کر کہا ۔۔
اس سادگی پہ کوں نہ مر جائے اے خدا
لڑتے ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہیں ۔۔
اب وہ منظر کہاں ہیں آلات نے احساس مروت کو کچل دیے ہیں ۔۔وہ زلفوں کا بکھرنا وہ کھلنا ۔۔وہ سراپا نظارہ بننا ۔۔وہ دانتوں پہ انگلی دبانا ۔۔وہ شرمانا نگاہیں نیچی رکھنا ۔۔وہ چھپنا پردہ کرنا ۔۔وہ کن انکھیاں ۔۔وہ نظارگی میں منظر بننا ۔۔سب معدوم ہوچکے ہیں ۔۔ اب میں غزل نہیں لکھ سکوں گا ۔۔۔اقبال جب یورپ گیا تو محبوب کہنے کی بجائے چیخ کر دختران بے حجاب کیا ۔۔میں ایک ان پڑھ خیال خم کو خیال خام ہی رہنے دونگا ۔۔۔ہاں اگر قدرت ہو تو اپنا درد لکھوں گا اپنی تہذیب کی سلامتی کے لئے دعائیں دیتا رہونگا ۔۔۔۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ مواد

اترك تعليقاً

إغلاق