تازہ ترین

کوسٹر حادثہ اورضلع انتظامیہ کی مجرمانہ غفلت،متعدد لاشیں اب بھی دیر ہسپتال میں رکھی ہوئی ہیں

چترال(نمائندہ چترال ایکسپریس)راولپنڈی سے چترال آنے والی کوسٹربس دیر بالا میں حادثے کا شکار ہوا جس کے نتیجے میں 11 مسافر جان بحق اور متعددزخمی ہوگے عوامی حلقوں نے اس موقع پر شدید غم غصے کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ چترال کے ڈسٹر کٹ انتظامیہ نے چترالی مسافروں کی لاشوں کو بروقت چترال پہنچانے کیلئے کوئی اقدام نہیں کیا جس کے نتیجے میں متعدد لاشیں اب بھی دیر ہسپتال میں رکھی ہوئی ہیں ان لاشوں کو چترال پہنچاکرورثاء کے حوالہ کرنا ضلع انتظامیہ کی ذمہ داری ہے لیکن ضلع انتظامیہ نے اس بارے میں کو ئی اقدام نہیں اُٹھایا جو ان کی انتہائی مجرمانہ غفلت ہے ڈسٹرک ناظم کی طر ف سے اس معاملے میں تعاون نہ ہونے پر عوامی حلقوں میں شدید غم و غصہ پایا جارہاہے ۔ تریج کے گاوں شاگروم سے تعلق رکھنے والے ممتاز عالم دین مولانا زارنبی خان رحمہ اللہ اپنے تین بچوں اور بھائی سمیت اس حادثے میں شہید ہو گئے تھے ۔ تریچ کے معروف کاروباری و سماجی شخصیت عبدالرزاق نے دیر میں موجود اپنے ایک جاننے والے کے توسط سے ان کی لاشوں کو وصول کرکے د و ایمولینس کے زریعے بر وقت چترال پہنچانے کا انتظام کروایا۔علاقے کی عوام نے موصوف کے اس اقدام کی بڑی تحسین کی۔

Advertisements

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ

زر الذهاب إلى الأعلى