تازہ ترین

خضار اکیڈمی گرم چشمہ اوریدغا کلچرل سوساٸٹی روٸی پرابیگ کی جانب سے پتھک کے حوالے سے ایک پر رونق پروگرام کا انعقاد

گرم چمشہ چترال ایکسپریس*( رپوٹر فخرالین یدغا)خضار اکیڈمی گرم چشمہ اوریدغا کلچرل سوساٸٹی روٸی پرابیگ کی جانب سے پتھک کے حوالے سے ایک پر رونق پروگرام کا انعقاد
*ﻟﻌﻞ ﺑﺪﺧﺸﺎﻥ ﺍﻭﺭﻋﻈﯿﻢ ﻣﻔﮑﺮ، ﻓﻠﺴﻔﯽ، ﺷﺎﻋﺮ ﺍﻭﺭﭘﯿﺮﺍﻥ ِ ﭘﯿﺮﭘﯿﺮ ﻧﺎﺻﺮ ﺧﺴﺮﻭ ﺳﮯ ﻣﻨﺴﻮﺏ ﭘﺘﮭﮏ ﮐﺎ ﺗﮩﻮﺍﺭ ﻟﭩﮑﻮﮦ ﮔﺮﻡ ﭼﺸﻤﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﻤﺎﻋﯿﻠﯽ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮨﺮﺳﺎﻝ ﯾﮑﻢ ﻓﺮﻭﺭﯼ ﮐ ﻮ ﻋﻘﯿﺪﺕ ﺍﻭ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﺳﮯ ﻣﻨﺎﺗﮯﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﺳﺎﻝ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﯽ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮐﯽ ﻣﻨﺎﺳﺒﺖ ﺳﮯ ﭘﺘﮭﮏ ﮐﺎ ﺗﮩﻮﺍﺭ ﻣﺬﮬﺒﯽ ﻋﻘﯿﺪﺕﺍﻭﺭ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﺳﮯ ﻣﻨﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ۔ اسﻣﻨﺎﺳﺒﺖ ﺳﮯ اتوار 2 فروری کو گرم چشمہ میں یدغا کلچرل اینڈ ایجوکیشنل سوساٸٹی اور Form Language Initiative(FLI)کے تعاوں پروکرام کا انعقاد کیا گیا۔پروگرام کاباقاعدہاغاز تلاوت کلام پاک سے کیا گیا۔جس کی سعادت طالبعلم ذیشان نے حاصل کی۔اس کے بعد حمد باری تعالی . نعت رسول مقبولﷺ ﻧﺎﺻﺮ ﺧﺴﺮﻭ ﮐﮯ ﻗﺼﺎﺋﺪ ﺍﻭﺭ ﭘﺘﮭﮏ ﺗﮩﻮﺍﺭ ﮐﯽ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺨﯽ ﭘﺲ ﻣﻨﻈﺮ کو پیش کیا گیا۔
افسرالدین SST اورحاجی محمد SST ٹیچرزنےﻟﻮﮔﻮںﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺗﮩﻮﺍﺭ ﮐﯽ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﭼﺘﺮﺍﻝ ﺍﻣﺪ ، ﺍﺱ ﮐﯽ ﭼﻼﮦ ﻧﺸﯿﻨﯽ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﭘﺘﮭﮏ ﻣﻨﺎﻧﮯ ﺗﮏ ﮐﮯ ﻭﺍﻗﻌﺎﺕ ﮐﻮ ﻣﻔﺼﻞﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺶ ﮐﯽ ۔ ﺍﻧﮩﻮﻥ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺧﻄﺒﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻋﻈﯿﻢ ﻣﻔﮑﺮ، ﺩﺍﻋﯽ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﺮ
ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻤﺎﺕ ﮐﻮ ﻋﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﺻﻞ ﺭﻭﺡ ﮐﻮ ﺍﺟﺎﮔﺮ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﺯﻭﺭ ﺩﯾﺎ ۔ ﺍﻧﮩﻮںﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﭘﺘﮭﮏ ﻣﻨﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﻘﺼﺪ ﺻﺮﻑ ﺍﻭﺭ ﺻﺮﻑ ﺩﯾﺴﯽ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﮭﺎﻧﺎﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﯾﮧ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ، ﺑﮭﺎﺋﯽ ﭼﺎﺭﮦ ، ﺍﻭﺭ ﺭﺷﺘﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩﻭﻥ ﮐﻮ ﻣﻈﺒﻮﻁ ﮐﺮﻧﮯﮐﺎ ﺩﺭﺱ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺴﻤﺎﻧﯽ ﺻﻔﺎﺋﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﻭﺡ ﮐﻮ ﭘﺎﮐﯿﺰﮦ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎﺩﺭﺱ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ﺍﺱ ﺗﻘﺮﯾﺐ کے مہمان خوصوصی ریٹاٸرڈ صوبیدار امیراللہ اور صدر محفل ٹیچر سبحان الدین تھے۔ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﺭﻭﺍﯾﺘﯽ ﭼﺘﺮﺍﻟﯽ ﭨﻮﺑﯽ ‏( ﮐﭙﻮﮌ ‏) ﺑﮭﯽ ﭘﮩﻨﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ۔ ﺗﻘﺮﯾﺐ ﺍﺱ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡﮐﮯ ﺍﻧﻌﻘﺎﺩ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺻﺪ اور یدغا زبان کے ارتقإ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ علاوالدین حیدری ﺣﺎﻇﺮﯾﻦ ﮐﻮ ﺍﮔﺎﮦ ﮐﯿﺎ ۔ﺗﻘﺮﯾﺐسے اہل قلم ادب شعرا گرم چشمہ نے ﺑﮭﯽ اپنے شاعری کے ذریعے شراکا کو انٹرٹینٹ ﮐﯿﺎ ﺍﻧﮩﻮﻥ ﻧﮯ ﺍﺱ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﺯﻣﮧﺩﺍﺭﺍﻥ ﮐﻮ ﺧﺮﺍﺝ ﺗﺤﺴﯿﻦ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭﺍﺋﻨﺪﮦ ﺍﯾﺴﮯ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﻣﻨﻌﻘﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﮯ
ﺗﻌﺎﻭﻥ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﯾﻘﯿﻦ ﺩﻻﯾﺎ۔ﺍﺱ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﮐﮯ ﮐﻤﭙﯿﺮﻧﮓ ﮐﮯ ﻓﺮﺍﺋﺾ طالبعلم ذیشان اور دو ساتھیوں ﻧﮯ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯼﺟﺒﮑﮧ ﺍﺱ
ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﮐﮯ ﻭﯾﮉﯾﻮ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈﻧﮓ ﮐﮯ ﻓﺮﺍﺋﺾفخرالدین یدغہ اور کیبیل اپیریٹر عبدالرحمن نے ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﺌﮯ ۔ﭘﺘﮭﮏ ﮐﮯ ﻣﻨﺎﺳﺒﺖ ﺳﮯ ﺛﻘﺎﻓﺘﯽ کھانون کا بھی اہتمام کیا گیا تھا۔ ﺍﺱ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ﮐﮩﻮﺍﺭ ﺍﻭﺭ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﺯﺑﺎﻥﯾﺪﻏﺎ ﮐﮯ ﮔﻠﻮﮐﺎﺭﻭﻥ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﻓﻦ ﮐﺎ ﻣﻈﺎﮨﺮﮦ ﮐﯿﺎ ۔ ﺍﺱ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡﮐﺎ ﻣﻘﺼﺪ ﺭﻭﺍﯾﺘﯽ ﺗﮩﻮﺍﺭ ، ﮐﮭﯿﻠﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﯾﺪﻏﺎ ﮐﻮ ﻧﺎﭘﯿﺪ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﺑﭽﺎﻧﮯ
ﺍﻭﺭ ﻋﻮﺍﻡ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﯽ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﺮﻭﯾﺞ ﮐﮯ ﺳﻠﺴﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﻧﺎﭘﯿﺪ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﻮﺷﺸﯿﮟ ﺗﯿﺰ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﺯﻭﺭ ﺩﯾﻨﺎ ﺗﮭﺎ ، ﺗﻘﺮﯾﺐﻣﯿﮟ ﯾﺪﻏﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﻮﺍﺭ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮔﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﻣﺰﺍﺣﯿﮧ ﺷﺎﻋﺮﯼ ﺑﮭﯽ ﭘﯿﺶ ﮐﯽ
ﮔﺌﯿﮟ ۔ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﺮﻗﯽ ﺍﻭﺭ ﺗﺮﻭﯾﺞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ علاوالدین نے ﮐﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﮐﺎﻣﻮﻥ ﭘﺮ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮈﺍﻟﯽ ﺍﻧﮩﻮﻥﻧﮯ ﺗﺸﻮﯾﺶ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﯾﺪﻏﺎ ﭘﻮﺭﮮ ﻟﭩﮑﻮﮦ ﮐﺎ ﺯﺑﺎﻥ ﺗﮭﺎ ﻟﯿﮑﮟ ﺍﺏ ﯾﮧﺻﺮﻑ ﭼﻨﺪ ﺩﯾﮩﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﻮ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﺍﻭﺭﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﺴﻞ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﻧﮧ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﺧﺪﺷﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺯﺑﺎﻥﻣﮑﻤﻞ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻧﺎﭘﯿﺪ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ انٹرنشنل ﺯﺑﺎﻥ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻟﻮﮔﻮﻥ ﭘﺮ لازم ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﺮﻗﯽ ﺍﻭﺭ ﺗﺮﻭﯾﺞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﯾﮟ۔،ﺗﻘﺮﯾﺐ ﺳﮯ ﺧﻄﺎﺏ ﮐﺮﻧﮯ ﮨﻮﺋﮯ مہمان خصوصی امیر اللہ ﻧﮯ ﺷﺎﻧﺪﺍﺭ ﺗﻘﺮﯾﺐ ﻣﻨﻌﻘﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ خضار اور یدغا کلچرل سوساٸٹی ﮐﯽ ﺗﻌﺮﯾﻒﮐﯽ ﺍﻧﮩﻮﻥ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﺛﻘﺎﻓﺖ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﺍﻗﺪﺍﺭﻭﻥ ﮐﯽ ﭘﯿﺮﻭﺭﯼ ﮐﺮﻧﮯﺳﮯ ﮨﯽ ﮨﻢ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺯﻧﺪﮦ ﺭﮦ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺛﻘﺎﻓﺖ ﮐﯽ ﺍﺻﻞﺭﻭﺡ ﭘﺮ ﻋﻤﻞ ﺩﺭﺍﻣﺪ ﮨﻢ ﺳﺐ ﮐﯽ ﺯﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﮨﮯ ﮨﻤﯿﮟ ﭼﺎﮨﺌﮯ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺛﻘﺎﻓﺖ ﮐﻮﭘﺎﻣﺎﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮨﺮ ﺑﺮﮮ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﺟﺘﺒﺎﺏ ﮐﺮﯾﮟ۔ اس ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺛﻘﺎﻓﺘﯽ ﻗﺪﺭﻭﻥ ﮐﮯ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﮐﮯ ﺳﺎﺗھ ﺳﺎﺗھﮨﻤﯿﮟ ﭼﺎﮨﺌﮯ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﺳﻮﺭ ﺍﻓﻌﺎﻝ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﺸﯿﺎﺕ ﺟﯿﺴﮯ ﻟﻐﻨﺖﮐﯽ ﺑﯿﺞ ﮐﻨﯽ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﯾﻦ ﺗﺎﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻣﻌﺎﺷﺮﮦ ﺍﯾﮏ ﺻﺤﺖ ﻣﻨﺪ ﻣﻌﺎﺷﺮﮦ ﺑﻦﺳﮑﮯ ۔ صدر محفل سبحان الدین ﻧﮯ ﺗﻘﺮﯾﺐ سے خطاﺏ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﺳﻮﺩ ﻣﻨﺪ ﺗﻘﺎﺭﯾﺐ ﮐﺎ ﺍﻧﻌﻘﺎﺩ ﺧﻮﺵ ﺍﺋﻨﺪ ﮨﮯﺟﻮ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺛﻘﺎﻓﺖ ﮐﯽ ﺗﺮﻗﯽ ﻭ ﺗﺮﻭﯾﺞ ﻣﯿﮟ ﻣﻌﺎﻭﻥ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﺍﻧﮩﻮﻥ ﻧﮯ ﺍﺱ
ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ﯾﺪﻏﺎ ﮐﯽ ﺗﺮﻗﯽ ﺍﻭﺭ ﺗﺮﻭﯾﺞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﮨﺮ ﻣﻤﮑﻦ ﺗﻌﺎﻭﻥ ﮐﺎ ﯾﻘﯿﻦ ﺩﻻﯾﺎ ۔ﺍﺱ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﮐﯽ ﻣﺎﻟﯽ ﻣﻌﺎﻭﻧﺖ ﺍﻭﺭ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﮐﻮ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ یدغاکلچرل سوساٸٹی ﮐﮯ ﺯﻣﮧ ﺩﺍﺭﺍﻥ ﮐﺎ ﺷﮑﺮﯾﮧ ﺍﺩﺍ ﮐﯿﺎ ۔

Advertisements

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ

زر الذهاب إلى الأعلى