تازہ ترینسید اولاد الدین شاہ

نوجوان جوڑے کا غیرت کے نام پرقتل اورہماری خاموشی….سید اولادالدین شاہ

بھائی، ایک لڑکی نے ٹک ٹاک پہ ڈانس کیا۔ پھر پتہ نہیں ہماری کلچر کا
 جنازہ نکل گیا مولوی سے لے کر ہم جیسے موم بتی ما فیا تک پھوٹ پھوٹ کر رونے لگے۔ کچھ دیر پہلے چار سے چھ سال کے دو چھوٹے پریاں ڈانس کررہی تھی ان معصوموں سے بھی ہمارے کلچر کو خطرہ لاحق تھا۔ سب پردے کے بارے میں لکچر دے رہے تھے۔
آج پر آمن وادی چترال میں دو خون ہوئے ہیں۔ ہمیں یہ جاننے میں کوئی دلچسپی نہیں ان کا قتل، کیوں، کیسے اورکس لئے ہوا۔کیا کوئی خود سے پولیس، جج، اور جلاد بن سکتا ہے؟ اگروہ لوگ غلط تھے اُن کو قانون کے مطابق سزادی جا سکتی تھی۔ یہ واقعہ 20 جون بروز جمعہ لوٹ اویرژوڑیان سورمیں پیش آیا۔
اطلاعات کے مطابق نوجوان جوڑے کو غیرت کے نام پر قتل کر دیا گیا ہے۔ لڑکے کی عمر 23 سال اورلڑکی کی عمر 18 سال بتائی جاتی ہے۔ لڑکی نویں جماعت کی طالبہ تھی اورلڑکا کالج میں پڑھتا تھا۔ ڈی پی چترال نے جوڑے کی قتل کی تصدیق کی ہے۔ سننے میں آ رہا ہے اس گاؤں میں اس قسم کے واقعات ہوتے رہتے ہیں ۔
اطلاعات کے مطابق لڑکے اورلڑکی نو یا دس بجے کے قریب جنگل میں مردہ حالت میں پائے گئے تھے۔ اورایک روسی ساختہ بندوق ایک پسٹل بھی لاشوں کے پاس سے ملا ہے۔گاؤں والوں کے مطابق دونوں کو قتل کرنے کے بعد جنگل میں شفٹ کیا گیا ہے۔ کیونکہ جائے وقوعہ پرخون کے نشانات نہیں تھے۔ لاشیں پوسٹ مارٹم کرنے کے بعد ورثا کے حوالے کردیے گئے۔ اوردونوں کو دفنا دیا گیا ہے۔ اور ورثاء پولیس سے تعاون کرنے کو تیارنہیں اورنہ ہی ایف آئی آر درج کرنا چاہتے تھے۔
ورثا کیس کو خود کشی کا رنگ دے کر دبانا چاہتے ہیں۔ حکومت وقت سے درخواست ہے کہ قاتلوں کو سخت سے سخت سزا دی جائے۔ تاکہ آئندہ کوئی اورقانوں کو اپنے ہاتھوں میں لینے کی جرآت نہ کرے
اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ

زر الذهاب إلى الأعلى