تازہ ترینڈاکٹر عنایت اللہ فیضی

داد بیداد…ضم اضلاع کا مستقبل…ڈاکٹرعنا یت اللہ فیضی

قبائلی علا قوں کی 7ایجنسیوں کے ساتھ فرنٹیر ریجنز کے نام سے الگ پہچان رکھنے والے علا قوں کو خیبر پختونخوا میں ضم کرنے کے بعد ضم اضلاع کا نیا نام دیا جا رہا ہے ان کے علا وہ کوہستان اپر اور چترال اپر کے نام سے دو مزید اضلاع بنا ئے گئے ہیں اور تما م نئے اضلا ع میں انتظا می دفاتر کا قیام مو جودہ صو بائی حکومت کے لئے ایک امتحا ن اور ازما ئش ہے ایک ضلع میں 34صو بائی دفاتر اور 12وفاقی دفاتر کو جگہ دینا، ان کے نظم و نسق کو سنبھا لنا اور افرا دی قوت مہیا کرنا آسان کام نہیں اس کام میں انتظامی امور کی مہارت کے ساتھ ما لی وسائل بھی بروئے کار آتے ہیں اور جہاں مالی وسائل کی بات آتی ہے وہاں ہزاروں طرح کی رکا وٹیں راستے میں حا ئل ہو جا تی ہیں جنو بی وزیر ستان میں لدھا سے کا نی گورم یا شما لی وزیر ستان میں میر علی سے میران شاہ جا تے ہوئے کسی جہان دیدہ بزرگ یا تعلیم یا فتہ نو جوان سے گفتگو کا مو قع ملے تو 1992کا تاجکستان اور دوشنبہ یا د آجا تا ہے 1992ء میں سویت یونین کے ٹوٹنے کے بعد تاجکستان کو کمیو نسٹ نظام کی پا بندیوں سے آزادی ملی ریڈیو، ٹیلی وژن اوراخبارات سے معلوم ہوتا تھا کہ بہت اچھا ہوا لیکن دیہات اور شہروں میں پرانی سہولیات ختم ہونے کے بعد نئی سہو لتیں نہیں آئی تھیں لو گ کہتے تھے اس آزا دی سے پرا نا سسٹم بہتر تھا با ہر سے آنے والا سیاح کہتاتھا صبر کرو نئے سسٹم کو جڑ پکڑ نے دو پھر تمہیں ساری سہو لیات پہلے سے بہتر حالت میں ملینگی مگر اس بات کا نہ بوڑھوں کو یقین آتا تھا نہ جوا نوں کو بھروسہ ہو تاتھا اکتو بر 2020میں وزیر ستان کے دونوں حصوں میں عوامی رائے کا ایسا ہی حال ہے یہ بات درست ہے کہ فرنٹیر کرائمز ریگو لیشن کی سختیوں سے آزا دی مل گئی پو لیٹکل ایجنٹ کی مطلق العنا ن باد شاہت ختم ہو گئی، فاٹا کا انگریزی نام بدل گیا ملک نامی لیڈر کا اقتدار نہیں رہا پھر بھی قو ماندان کا خوف پہلے کی طرح مو جو د ہے خا صہ دار کی جگہ پو لیس کا نام آگیا قانون ابھی تک نہیں آیا پو لیٹکل تحصیلدار کی عدالت کے مقا بلے میں جج کا نام سننے میں آیا مگر جج کی عدالت نہیں آئی،ہسپتال کا نا م سننے میں آیا تھا علا ج معا لجہ کا نظام نظر نہیں آیا سکو لوں اور کا لجوں کا نام سنا تھا سکول یا کا لج دیکھنا اب بھی نصیب نہیں ہوا باہرسے آنے والا سیاح وزیر،محسود اور داوڑ کو بمشکل قائل کرتا ہے کہ آہستہ آہستہ سب کچھ ہو جائے گا ”گھبرانا نہیں“ جب آپ جمرود اور لواڑ گئی کے با زاروں میں لو گوں سے ملتے ہیں تو صورت حال آپ کے قا بو میں نہیں رہتی ایک افریدی اور شنواری طرح طرح کی مثا لیں دے کر آپ کو لا جواب کر دیتا ہے وہ کہتا ہے حکومت ہمارے ہسپتا ل میں مو جو د مشینری کو کار آمد کیوں نہیں بنا تی؟ ہمارے ہاں مو جو د سکول میں اسا تذہ کی آسا میاں کیوں نہیں دیتی؟ ہمارے خا صہ داروں کو پو لیس میں ضم کیوں نہیں کر تی کرایے کے دفتروں میں جج کا دفتر کیوں نہیں کھو لتی؟ ان جیسے سوالات کا آپ کے پا س کوئی جواب نہیں ہوتا خار با جوڑ میں ایک نو جوان نے اخبار کا تراشہ ہمیں دکھا یا یہ اسی مہینے کی کسی تاریخ کا اخباری تراشہ تھا اُس میں تفصیل کے ساتھ یہ بات لکھی گئی تھی کہ فاٹا کے محکمہ صحت کے دفترسے فرنیچر اور کمپیو ٹر وں کے ساتھ 40گاڑیاں غا ئب کی گئیں ان میں بڑے افیسروں کے زیر استعمال 5لگژری کاریں بھی تھیں اخباری تراشہ دیکھ کر ہمیں دُکھ ہوا نہ جا نے ایسی خبروں سے قبائلی عوام اور خصو صاً تعلیم یا فتہ نسل کی کتنی دل آزاری ہوئی ہو گی؟ ایک سیا ح کے پا س ایسی باتوں کا نہ جواب ہوتا ہے نہ علا ج ہو تا ہے ایسی باتیں دکھ، افسوس اور رنج کی کیفیت میں اضا فہ کرتی ہیں 31مئی 2018کو فاٹا کا انضمام عمل میں آیا جن 7ایجنسیوں کو فاٹا کا نام دیا جاتا تھا ان کا کل رقبہ 27ہزار مربع کلو میٹر ہے ان کی آبادی 50لاکھ ہے ان کی سرحدیں افغا نستان کے صو بہ جات کونڑ، ننگر ہار، پکتیا، خوست اور پکتیکا (Paktika) سے ملتی ہیں ہمارے ہاں اپر کوہستا ن اور اپر چترال کے نئے اضلاع کا حال بھی ضم اضلاع سے مختلف نہیں پرانے ضلع نے ان کو عاق کر دیا ہے نئے ضلع نے ان کو گو دلینے کا فریضہ انجام نہیں دیا اب یہ تین میں رہے نہ تیرہ میں حکومت کہتی ہے کہ ضم شدہ ضلع ہو یا نیا ضلع، اس میں جان ڈالنے کے لئے ایک ضلع کو کم از کم 80کروڑکا غیر تر قیا تی فنڈ اور کم سے کم 2ارب روپے تر قیا تی بجٹ چاہئیے اتنے وسائل کہاں سے آئینگے؟ پشاور کے مہمان خا نے میں دو ریٹائرڈ افیسروں کے سامنے یہ مسئلہ رکھا گیا یہ ایک غیر رسمی گفتگو تھی سب لو گ کُھل کر بات چیت کر رہے تھے تجربہ کار افیسروں نے کہا ایک کام پہلے ہونا چاہئیے تھا جو نہیں ہوا انضام سے پہلے فاٹا سکرٹریٹ کے تما م وسائل پشاورکے ورسک روڈ،سول سکرٹریٹ اور مال روڈ یا سٹیڈیم روڈ سے متعلقہ قبائلی اضلاع میں منتقل کرنے کی ضرورت تھی اس کے بعد تر جیحات کا تعین کر کے مر حلہ وار وسائل فراہم کرنے تھے مو جو دہ حا لات میں بہت سے کام اضا فی وسائل کے بغیر دستیاب فنڈ سے ہو سکتے ہیں مثلاً عدالتوں کو فعال کر کے انصاف کی فراہمی کا نمو نہ قبائلی عوام کو دکھا نے کے لئے قریبی ڈویژنوں کے اضلاع سے ایک یا دو جج عارضی طور پر ضم اضلاع کو دے سکتے ہیں اس پر اضا فی اخراجا ت نہیں آئینگے اسی طرح پو لیس سٹیشنوں کو قریبی ڈویژن اور اضلاع کے ریجنل پو لیس افیسر یا ڈی پی او کی وساطت سے کم سے کم اخراجات میں فعال کیا جاسکتا ہے البتہ ہسپتا لوں، سکو لوں اور کا لجوں کے لئے فنڈ کی ضرورت پڑیگی بنیا دی ڈھا نچے کے لئے بجٹ کی ضرورت پڑے گی یہ کام مر حلہ وار انجام دیئے جا سکتے ہیں ضم اضلاع یا نئے اضلاع کے عوام کو اسی بات کا احساس دلا نے کی ضرورت ہے کہ صو بائی حکومت تمہا رے لئے کام کر رہی ہے۔


اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ مواد

إغلاق