تازہ ترین

جین ایکسپرٹ مشین کوکسی دوسرے ادارے کو حوالہ کرنے سے پورے چترال میں موذی مرض ٹی بی کا علاج نا ممکن ہو جائے گا۔صدر ڈاکٹرز فورم ڈاکٹر آصف علی شاہ

چترال(نمائندہ چترال ایکسپریس)چترال ڈاکٹرز فورم کے صدر ڈاکٹر آصف علی شاہ نے اپنے ایک بیان میں جین ایکسپرٹ مشین کو اے کے ایچ ایس پی کو دینے کے حوالے سے اپنے تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ مشین ڈی ایچ کیو ہسپتال چترال میں ٹی بی کے مریضوں کی تشخیص اورعلاج میں استعمال ہوتا ہے۔۔پورے چترال سے ٹی بی کے مریض ڈی ایچ کیو چترال میں آتے ہیں اور یہاں پر انکے ٹیسٹ اسی مشین کے ذریعے کیے جاتے ہیں اور بعد ازاں انکو ٹی بی کے ادویات مہیا کئے جاتے ہیں۔۔۔رواں سال 1400 مریضوں کے ٹیسٹس جین ایکسپرٹ مشین ذریعے کیے گئے اور اب یہ زیرِ علاج ہیں۔۔فالو اپ وزٹ میں اب اُنکا ٹیسٹس ہونا باقی ہے۔اُنہوں نے کہا ی کہ اب اگر اس مشین کو حوالہ کیا جاتا ہے تو پورے چترال میں ٹی بی جیسے موذی مرض کا علاج نا ممکن ہو جائے گا۔
صدر چترال ڈاکٹرز فورم نے اس بات پر زور دیا کہ ٹی بی کے نادار مریضوں کی علاج کے خاطر اس مشین کوڈی ایچ کیو ہسپتال چترال میں ہی برقرارکیا جائے اوراے کے ایچ ایس پی کے لیے کسی متبادل مشین کا بندوبست کیا جائے۔۔اُنہوں نے مزید کہاٹی بی کا علاج ایک طویل لمدت اور پیچیدہ عمل ہے جس میں مریض کا اسی مشین کے ذریعے ٹیسٹ کرنا ہوتا ہے اورٹی بی کا مرض چترال کے دونوں اضلاع میں ایک وبائی مرض ہے اور اِس مرض کا شکار عموماً معاشرے کا غریب طبقہ ہوتا ہے۔۔اس لیے اسی مرض کے حوالے سے ہم کسی بھی بے احتیاطی کا متحمل نہیں ہو سکتے

Advertisements

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ

زر الذهاب إلى الأعلى