مضامین

ناظم اعلیٰ اسلامی جمعیت طلبہ پاکستان کا دورۂ چترال…طلحہ حسین ناظم تنظیم و تربیت اسلامی جمیعت طلبہ چترال لوئر

شباب وہ عرصۂ حیات ہے کہ جس میں انسان کے قوی مضبوط ، ہمت جواں اور رگوں میں خون بجلیاں بن کر دوڑتا ہے ۔ وہ پہاڑوں سے ٹکرانے کا عزم رکھتا ہے اور ہواؤں کا رخ موڑنے پر آمادہ رکھتا ہے ۔ اقبال نے مسلم نوجوانوں کو شاہین کا لقب دے کر بلند نگاہی اور رفعت پروازی کا سبق دیا ہے ۔ وہ مسلم نوجوانوں کو گمان آباد ہستی سے نبرد آزمائی کے لیے قوتِ یقیں کے ذریعے ستاروں کو گزرگاہ بنانے اور چرخِ نیلی فام سے آگے بڑھنے پر اکساتے رہے ۔ وہ چاہتے تھے کہ ایمان کی دولت اور یقین کی ثروت کی موجودگی میں ممکناتِ زندگانی پر صرف اور صرف مسلم نوجواں کا ہی حق ہو ۔ مگر افسوس کہ ہم اپنی فطری نارستی ، ذہنی پسماندگی ، ایمانی کمزوری اور خود عرضی و کم نگاہی کی بنا پر ستاروں پر کمندیں ڈالنے کے بجاۓ آپس ہی میں دستِ گریباں ہوگئے ۔ خود اعتمادی اور خود داری کو فروغ دینے کے بجاۓ دوسروں پر انحصار کے ذریعے قرض کی مئے نوش کرنے کو عافیت سمجھتے ہیں۔ ممکناتِ زندگانی کا امیں بننا تو دور کی بات، ہم تو اپنے دفاع کے بارے میں بھی اغیار پر انحصار کرتے ہیں ۔ اس نارست مزاجی اور نکما پن کو دیکھ کر آسمان نے ہم سے رخ موڑ لیا ، دنیا چھن گئی ، اور ہمارا شمار دنیا کے نااہل ترین لوگون میں ہونے لگا :
گنوادی ہم نے جو اسلاف سے میراث پائی تھی
ثریا سے زمیں پر آسماں نے ہم کو دے مارا ۔

ہمارے دین کے اصول بڑے واضح اور دو ٹوک صورت میں آج بھی ہمارے سامنے ہیں ، ہمارے اسلاف کے کارنامے عیاں و نمایاں ہیں ۔ وہ کن محاسن اور خصائل کی بنا پر اوجِ فلک پر محوِ پراوز تھے ، اللّٰہ کے فضل سے وہ ایک ایک خصلت اور جوہر محفوظ ہے ۔ مسلم نوجوانوں میں دلنوازی موجود تو ہے مگر اس کو نکھارنے اور نیک مقصد کے لیے استعمال کرنے کی ضرورت ہے، اس کے تیغِ جگردار کو بس تھوڑی سی آب دینے کی حاجت ہے ، اس کی قوتِ یقیں کو مہمیز دینا وقت کی ضرورت ہے اور زمانہ اس کی خودی اور تیقن کو بیدار کرکے اعتماد کو بحال کرنے کا متقاضی ہے۔
اگر چہ ہر طرف مایوسی ہی مایوسی ہے، نحوست ہی نحوست ہے مگر ہم پھر بھی مایوس نہیں ہیں، اگر اقبال کے شاہینوں کو کرگسوں کی صحبت سے دور رکھتے ہوۓ شاہبازوں جیسے ماحول میں رکھ کر ان کی تعلیم و تربیت کا اہتمام کیا جاۓ تو یہ شاہین بچے اپنی خصلت و عادت پر دوبارہ بحال ہو سکتے ہیں اور جب ان میں وہ شاہبازانہ اوصاف پیدا ہوجاۓ تو کوئی کرگس اس کے سامنے ٹھہر نہیں پاۓ گا ۔ موجودہ زمانے میں جب ہر طرف انتشار اور افراتفری پھیلی ہوئی ہے اس طرح کے حالات میں شاہبازوں کا ماحول شاہین صفت نوجوانوں کا گروہ ” اسلامی جمعیت طلبہ “ ہی فراہم کر سکتی ہے ۔

تو نے پوچھی ہے امامت کی حقیقت مجھ سے
حق تجھے میری طرح صاحب اسرار کرے

ہے وہی تیرے زمانے کا امام برحق
جو تجھے حاضر و موجود سے بیزار کرے

موت کے آئنے میں تجھ کو دکھا کر رخ دوست
زندگی تیرے لیے اور بھی دشوار کرے

دے کے احساس زیاں تیرا لہو گرما دے
فقر کی سان چڑھا کر تجھے تلوار کرے

تعلیم و تعلم سے وابستہ نوجواں جس براہیم وقت کے منتظر تھے ، نوجوانوں کو جس بلند نگاہ قائد کی ضرورت تھی ، وہ زیاں کا احساس دلانے والا اور فقر کی سان چڑھانے والا ” اسلامی جمعیت طلبہ پاکستان “ کے ناظمِ اعلٰی ” برادرم حمزہ محمد صدیقی “ چترال کے دو روزے دورے پر آ رہے ہیں ۔ اس دورے میں محترم ناظم اعلیٰ صاحب چترال جمعیت ٹیم سے نشست کرے گا اور ساتھ ہی چترال کے مختلف تعلیمی اداروں کا دورہ بھی کرنے کے ساتھ چترال کے اسٹوڈنٹس ایشو پر پریس کانفرنس بھی کرے گا ۔ آپ تمام ساتھیوں سے طلبہ رہنما کی چترال آمد کے موقع پر ان کے بھر پور استقبال کرنے اور پروگرامات میں شرکت کرنے کی استدعا ہے۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔