تازہ ترینمضامین

داد بیداد…تیسرا کر دار…ڈاکٹر عنا یت اللہ فیضی

میڈیا میں اس بات کاچر چا ہے کہ پا کستان نے افغا نستان کو اشیائے خوراک کے تحفے بھیجے اور جن لاریوں میں امدادی سامان بھیجے جا تے ہیں ان لا ریوں پر پا کستان کا سبز ہلا لی پر چم لگا ہوتا ہے اس پر جو خبریں اور تصویر یں آگئی ہیں ان میں دکھا یا گیا ہے کہ لا ری افغا نستان پہنچنے کے بعد لو گ پا کستان کا جھنڈا اتار کر پھینک دیتے ہیں وہ کہتے ہیں کہ پشاور کی ایک عمارت پر طالبان کا جھنڈا لہرایا گیا تو لو گوں نے اس کو اتار لیا تھا اس خبر اور تصویر کے آنے کے بعد بھانت بھا نت کی بو لیاں بو لی جا رہی ہیں بعض حلقے مشورہ دیتے ہیں کہ افغا نستا ن کو امدا دی سا مان بھیجنے کا سلسلہ بند کیا جائے اس ہا ہا کار میں جس بات کو نظر انداز کیا جا تا ہے وہ تیسرا کر دار ہے کوئی بھی اس بات پر تو جہ نہیں دیتا کہ افغا نستان میں تیسرا کردار مو جود ہے جو پا کستان اور افغا نستان کے درمیان غلط فہمیاں پیدا کرنے پر اپنی تما م تر توا نا ئیاں خر چ کر رہا ہے اپنی بساط بھر کو شش کر رہا ہے اور پا کستان کا پر چم امدا دی سامان کی کسی لا ری سے اتر وا نا اس کی معمولی کا وش ہے اور یہ کاوش دونوں برادر اسلا می ملکوں کو مو قع دیتی ہے کہ آئیندہ دونوں مما لک تیسر ے کر دار کی کا رستا نیوں سے ہو شیا ر رہیں اس کا پس منظر تاریخ نہیں حا لا ت حا ضرہ کا ایک باب ہے 15اگست 2021تک امریکہ، نیٹو مما لک اور بھا رت کا افغا نستا ن پر راج تھا ان کی حکومت تھی ان کی مر ضی چلتی تھی ان کے حکم کو ما نا جا تا تھا 15اگست 2021کے دن خا موش انقلا ب آیا امارت اسلا می افغا نستا ن کے درویش صفت حکمران کسی جنگ و جدل اور مزا حمت کے بغیر کا بل میں داخل ہوئے قصر صدارت پر ان کا قبضہ ہوا افغا نستان کی حکومت معزول ہو گئی 3لاکھ افغا ن فو ج اردوئے ملی ہتھیا ر اٹھا ئے بغیر منظر سے غا ئب ہو گئی ہتھیا ر ڈالنے کی نو بت بھی نہیں آنے دی یہ سب کچھ سابقہ حکمرا نوں کے وہم و گما ن میں نہ تھا امارت اسلا می کے قیام کے بعد پا کستان واحد ہمسا یہ تھا جس نے حدیث کی رو سے ظا لم اور مظلوم دونوں کی مدد کی، ظا لم کو بھا گنے میں مدد دی مظلوم کو پاوں جما نے میں مدد دی بھا گنے والے ظا لموں میں سے دو مما لک نے اپنے گما شتے افغا نستا ن میں پھیلا دیے تا کہ ان کے مفا دات کا کسی نہ کسی حد تک تحفظ ہو پا کستان کے ساتھ افغا ن ملت کی دوستی مستحکم نہ ہونے پا ئے اور اما رت اسلا می افغا نستا ن کی حکومت پائیدار بنیا دوں پر استوار نہ ہو یہ لو گ امارت اسلا می افغا نستا ن کو یا عورت کے آئینے میں دیکھتے ہیں یا پنجشیر اور تا جک قو میت کے آئینے میں دیکھتے ہیں یا ازبک اور شما لی اتحا د کے آئینے میں دیکھتے ہیں ہر آئینے میں ان کو پا کستان کا ایک چبھتا ہوا کا نٹا نظر آتا ہے اور کا بل پر وار کرنے سے پہلے اسلا م اباد پر وار کر تے ہیں امدادی سامان کی لا ری سے پاکستانی پر چم کو اتار نا معمولی بات ہے آگے تیسرا کر دار اور بھی کا م کرے گا بھارت اور امریکہ دونوں افغا نستا ن واپسی کا بہا نہ تلا ش کررہے ہیں وہ کسی اہم عمارت میں دھما کہ کر کے اس کا الزام پاکستان پر لگائینگے وہ کسی اہم شخصیت کو قتل کر کے اس واردات میں پا کستان کو ملوث کرینگے یا وہ کسی اہم شخصیت کو اغوا کر کے ایسا مطا لبہ کرینگے جس میں پا کستان کا نا م آئے گا ان کے پاس شرارت کے اور بھی کئی راستے ہیں حا لیہ دنوں میں دو اہم یورپی مما لک کی طرف سے پا کستان میں کر کٹ کھیلنے سے انکا ر کے پس پر دہ بھی ایسی طا قتوں کا ہا تھ ہے جو پا کستان اور افغا نستا ن کے درمیاں برادرانہ قربت کو حسد اور رقابت کی نظر سے دیکھتے ہیں غلط فہمیاں پیدا کر نے میں تیسرا کردار سب سے زیا دہ فعال ہو تا ہے اور افغا نستا ن میں ہمارا اصل مقا بلہ تیسرے کردار سے ہے دونوں ملکوں کے درمیان پیدا ہونے والی کسی غلط فہمی کو اس زاویئے سے دیکھنا چا ہئیے اور اس کا حل بھی تلا ش کر نا چا ہئیے۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔