تازہ ترین

پی پی یی نومنتخب کابینہ کا چترال پہنچنے پر شانداراستقبال،چترال کو برادری اور فرقہ ورانہ بنیادوں پر تقسیم ہونے سے بچائیں گے،انجینئر فضل ربی

چترال (نمائندہ۔ چترال ایکسپریس) پاکستان پیپلز پارٹی ضلع لویر چترال کے نومنتخب صدر انجینئر فضل ربی جان اورنومنتخب جنرل سیکرٹری قاضی فیصل پیرکے روز اپنی انتخاب کے بعد پہلی مرتبہ چترال پہنچے تو لواری ٹنل سے لے کر چترال شہر تک براڈام، عشریت، میرکھنی، کالکٹک، دروش، کیسو، گہیریت، ایون بروز، چمرکن، بکرآباد اور جغور کے مقامات پر ان کاشاندار استقبال کیا بھی موجود تھے۔جبکہ انفارمیشن سیکرٹری نظارولی شاہ  بھی اُن کے ساتھ موجود تھے۔سینکڑوں گاڑیوں پر مشتمل یہ جلوس اتالیق پل پہنچ کر اختتام پذیر ہوا جہاں خطاب کرتے ہوئے انجینئر فضل ربی جان نے ان کا اور کابینہ کے دیگر ارکان کا شاندار استقبال کرنے پر چترال کے عوام کا شکریہ ادا کرتے ہوئے اس مضبوط عزم کا اظہارکیاکہ وہ چترال کو برادری اور فرقہ ورانہ بنیادوں پر تقسیم ہونے بچائیں گے جس کا خطرہ اب لاحق ہے۔ انہوں نے جماعت اسلامی پر زور دیا کہ وہ اپنی یلیٹ فارم کو برادری اور خاندان کی بنیاد پر تقسیم اور جے یو آئی کو فرقہ ورانہ تقسیم کے لئے استعمال ہونے نہیں دیں گے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہا کہ یہ سب کے مفاد میں ہے کہ ہم چترال میں اتحاد و اتفاق اور ہم آہنگی کی فضا کو پروان جڑہادیں اور نفرتوں کو دفن کریں۔
انہوں نے کہا کہ پارٹی ورکروں نے قیادت کا جو بار گران ان کے کاندھوں پر ڈال ہے، وہ اسے اٹھانے کی بھر پور کوشش کریں گے اور چترال کو بلاول بھٹو کے وژن کے مطابق پارٹی کا گڑھ بنادیں گے۔ انہوں نے کہاکہ پی ٹی آئی نے قوم اور خصوصاً نوجوانوں سے جو وعدہ کیا تھا، وہ اگر اس سال دسمبر تک پورا نہیں ہوا تو پی ٹی آئی کے جوانوں کو اپنے فیصلے پر نظر ثانی کرتے ہوئے بلاول بھٹو جیسے عظیم نوجوان قیادت پر اعتماد کرتے ہوئے اس پارٹی کے جھنڈے تلے جمع ہوجائیں۔ انہوں نے کہاکہ پی پی پی ہی دراصل نوجوانوں کا نمائندہ جماعت ہے جس کے پاس نوجوانوں کے لئے پروگرام موجود ہے۔ اس موقع پر پارٹی کے دیگر رہنما عالم زیب ایڈوکیٹ، شریف حسین،قاضی سجاد، اپر چترال کے صدر امیر اللہ خان اور دوسرے بھی موجود تھے۔ اس موقع ہارٹی کے دیگر رہنمائوں قاضی فیصل، شریف حسین، عالم زیب ایڈوکیٹ،،قاضی سجاد، اپر چترال کے نو منتخب صدر امیر اللہ خان اور دوسروں نے بھی خطاب کیا۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔