تازہ ترینمضامین

سیاحت اور سیاحتی مقام زائینی پاس۔…تحریر۔۔۔۔ جمشید احمد

علاقہ موڑکھو ضلع اپرچترال کا ایک سب تحصیل ہے جس کی آبادی تقریباً اکاون ہزار نفوس پر مشتمل ہے اور دور میں سیاحتی مقامات میں شامل تھا۔ اس علاقے کے اکثر اور بیشتر لوگوں کی ترقی کا دارومدار ملکی اور غیر ملکی سیاحوں کی موڑکھو میں آمد سے ہوتے تھے۔غیر ملکی سیاح ہر گرمیوں کے موسم میں اس علاقے کی طرف رخ کرتے تھے۔اور موڑکھو آتے تھے اور ہیڈ کوارٹر وریجون میں قیام کرتے اور جہاں کہیں خوب صورت سبزہ زار ملتے وہاں ڈھیرا ڈالتے سیاحوں کی عزت کی جاتی تھی اور رات گزارتے اور صبح پیدل روانہ ہوتے سیزن میں سیاحوں کی آمدورفت کا سلسلہ جاری رہتا تھا۔اس وقت کے میرے غریب خانے کے سبزہ زار وریجون میں میری بچپن کی یاد والد مخترم کی گود میں ایک غیر ملکی سیاح کی لی گئی ایک خوبصورت فوٹو بھی کافی عرصے تک میرے گھر میں موجود تھی۔اس طرح غیر ملکی سیاح علاقے میں آتے جاتے اور وریجون سے پیدل سفر کرتے زائینی پاس کے 12000فٹ بلندی عبور کرکے تریج میر چوٹی دیکھنے اور سر کر نے کے لیے تریچ ویلی جاتے تھے وہاں تریچ کے اخری گاؤں شاگروم میں جاتے وہاں سیاحوں کی خوب اوبگھت کی جاتی لوگ ان کی بہت عزت اور احترام کرتے ان کی ہر قسم کی رہنمائی کرتے اور علاقے کے محنت کش افراد ان کی سامان ان کے ساتھ لیکر تریچ میر کے دامن تک لے جاتے تھے انہیں معاوضہ دی جاتی تھی جس سے انہیں روزگار ملتے تھے۔علاقے کے لوگ سیاحوں سے فائدہ اُٹھاتے تھے۔اور علاقہ خوشحال تھا۔جب 9/11کا واقعہ ہوا تو ملک دہشت گردی اور پریشانی کے لپیٹ میں آگیا غیر ملکیوں اور غیر ملکی سیاحوں کا ملک میں آنا مشکل ہوا اور سیاحوں کے آنے کا سلسلہ بند بھی ہوا۔ اور اب اللہ تعالی کی فضل کرم سے ملک میں امن و امان ہے غیر ملکی سیاح پاکستان کے مختلف سیاحتی مقامات کی طرف رُخ کر تے ہیں آمدورفت کے لیے کشادہ سڑکیں تعمیر ہو چکے ہیں جس سیاحتی مقامات جاتے ہیں ان کے لیے ہر قسم کی سہولیات میسر ہیں ہر جگہ امن و امان ہے اور چترال کے خوبصورت وادی مدک لشٹ کو بھی سیاحتی مقامات میں شامل کیا گیا ہے اور سیاحت کو فروغ مل رہی ہے اس کے علاوہ جہاں تک اپر چترال کے علاقے موڑکھو میں سیاحتی مقام زائینی پاس میں یکم اکتوبر سے شروع ہونے والا پیراگلائیڈنگ مقابلوں کا تعلق ہے یہ اس علاقے کی ترقی کے لیے خوش ائند بات ہے اس میں وزیر اعلی محمود خان اور دوسرے وزراء کی آمد متوقع ہے جس سے اس علاقے کی ترقی میں ضرور مدد ملے گی۔ علاقے کے عوام ڈپٹی کمشنر اپر چترال محمد علی اور ایونٹ انتظامیہ کی اس اقدامات کو سراہتے ہیں۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔