وزیراعلیٰ محمود خان کی نیا پاکستان ہاوسنگ سکیم کے مختلف منصوبوں پر عملدرآمد کی رفتار پر عدم اطمینان کا اظہار

پشاور(چترال ایکسپریس)وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے نیا پاکستان ہاوسنگ سکیم کے تحت صوبے میں ہاوسنگ کے مختلف منصوبوں پر عملدرآمد کی رفتار پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے متعلقہ حکام کوان منصوبوں پر ٹھوس پیشرفت کو یقینی بنانے کے لئے ایک ماہ کی ڈیڈ لائن دے دی ہے۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ نیا پاکستان ہاوسنگ سکیم لوگوں کو سستے گھروں کی فراہمی کے لئے موجودہ حکومت کا ایک فلیگ شپ منصوبہ ہے اور اس سکیم کے تحت منصوبوں پر عملدرآمد میں غیر ضروری تاخیر کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ عوامی فلاح و بہبود کے ان منصوبوں پر صرف کاغذوں میں نہیں، بلکہ گراو¿نڈ پر پیشرفت چاہیئے۔
وہ پیر کے روز نیا پاکستان ہاوسنگ سکیم کے حوالے سے منعقدہ ایک اجلاس کی صدارت کر رہے تھے۔ ایڈیشنل چیف سیکرٹری شہاب علی شاہ، متعلقہ محکموں کے انتظامی سیکرٹریز اور دیگر اعلیٰ حکام نے اجلاس میں شر کت کی۔ اجلاس میں اس اسکیم کے تحت صوبے میں ہاوسنگ کے مختلف منصوبوں پر پیشرفت کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔ وزیراعلیٰ نے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ اس اسکیم کے تحت ہاو¿سنگ کے لئے زمینوں کے مسائل جلد سے جلد حل کئے جائیں جبکہ صوبے میں پیری اربن ہاوسنگ اسکیموں پر عملی پیشرفت اور ان کے سنگ بنیادکے لئے ٹائم لائنز مقرر کی جائیں۔ اجلاس کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ نیا پاکستان ہاوسنگ اسکیم کے تحت جلوزئی اور سوڑیزئی ہاوسنگ اسکیموں کے علاوہ پیری اربن ہاوسنگ کے مختلف منصوبوں پر پیش رفت جاری ہے۔ 150 کنال پر محیط جلوزئی ہاوسنگ اسکیم کا پی سی ون منظور ہو گیا ہے جبکہ منصوبہ 3.3 ارب روپے کی لاگت سے مکمل کیا جائیگا۔ مزید بتایا گیا کہ منصوبے کے ڈیزائن کے لئے کنسلٹنٹ ہائیر کر لیا گیا ہے۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔