جذبہ خدمت تنظیم چترال اویرکا اجلاس ، سردار مجاہد نامی شخص کی دھمکیوں کی شدید الفاظ میں مذمت۔

چترال(چترال ایکسپریس) جذبہ خدمت تنظیم چترال اویر کا اجلاس باغ اویر میں منغقد ہوا۔اجلاس میں اہلیان علاقہ نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔اجلاس میں علاقہ اویر میں جاری ترقیاتی کاموں کے حوالے سے تفصیلی گفگتگو ہوئی۔اس کے علاوہ چھانی اویر روڈ مین جاری کام کے حوالے سے بھی تفصیلی گفتگو ہوئی اور کہا گیا کہ چھانی اویر روڈ میں ٹھیکہ دار کو جلد از جلد ادئیگی یقینی بنانے کے لیۓ اداروں سے درخواست کرینگے اور پہلے بھی ہم  کئ بار ایم این اے ،ایم اپی اے اور حکومت سے درخواست کر چکے ہیں۔یاد رہے کہ چھانی اویر روڈ علاقہ اویر کا بنیادی مسلہ ہے اسکو کسی صورت بھی پایہ تکمیل تک پہنچانا ہے۔اس سلسلے میں جو بھی اواز اٹھائینگے وہ قابل تعریف ہوگا۔جذبہ خدمت تنظیم اویر نے پہلے بھی اس سلسلے میں اواز اٹھائی ہے اور ائندہ بھی اس سلسلے میں اواز اٹھائینگے۔انہوں نے کہا کہ ٹھیکہ دار نے اپنے بساط سے زیادہ کام کرچکا ہے اس کو ادائگی یقینی بنانا چاہیۓ۔اور  کام کی معیار پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا۔اس سلسلے میں ہم ٹھیکہ دار سے ضرور پوچھینگے۔یہ عوام کا حق ہے۔جذبہ خدمت تنظیم کے نوجوانوں نے مجاہد نامی شخص کی  تنظیم کے سرپرست اعلی کو دھمکی دینے کی شدید الفاظ مین مذمت کی اور کہا کہ چند شرپسند عناصر اپنی مضموم مقاصد کے حصول کے لیۓ لوگوں کو استعمال کررہے ہیں اور وہ یہ نہیں چاہتے کہ علاقہ ترقی کریں۔جذبہ خدمت تنظیم کے نوجوانون نے ڈی پی او، ڈپٹی کمشنر اپر چترال اور قانون نافظ کرنے والے اداروں سے درخواست کی ہے کہ سردار مجاہد شریف لوگوں کو ڈرانے کے ساتھ دھمکیاں دیتا ہے ۔ان کے پیچھے جتنے بھی لوگ ہیں انکے خلاف ایکشن لیا جایۓ اور اویر میں جتنے بھی قتل کے کسیز ہیں انکی از سر نو تفتیش کیا جایۓ تاکہ بے گناہ لوگ اسے لوگوں سے محفوظ رہ سکے۔انہوں نے مزید کہا کہ اگر اسکے خلاف ایکشن نہ لیا گیا تو ہم احتجاج پر مجبور ہوجائینگے۔انہوں نے کہا کہ جذبہ خدمت تنظیم کی وجہ سے علاقے میں ترقیاتی کام ہورہے ہیں جس کی وجہ سے بعض مفاد پرست عناصر کے دکان بند ہوگیۓ ہیں۔اس وجہ سے وہ دھمکیون پر اتر ائۓ ہیں۔سرپرست اعلی شفیق الملک کا جذبہ خدمت تنظیم علاقہ اویر کے لیۓ ایک تحفہ ہے پورا اویر اس سے متفق ہیں۔انہوں نےایس ایچ او تھانہ اویر سے مطالبہ کردیا کہ جتنے بھی لوگ اس میں ملوث ہیں انکو سخت سے سخت سزاء دی جائیں اور انہیں علاقہ اویر کے لوگوں کے سامنے لایا جایۓ۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔