آپ سلامت رہو ہزار بار۔۔۔ ہر برس کے ہوں دن پچاس ہزار۔۔۔تحریر: شہاب ثنابرغذی

آپ سلامت رہو ہزار بار۔۔۔
ہر برس کے ہوں دن پچاس ہزار۔۔۔
ہر سال 24 مئی کو دنیا بھر میں بھائی کا عالمی دن منایا جاتا ہے۔۔کل طبیعت ناساز ہونے کی وجہ سے میں بدقسمتی سے اس خصوصی دن کو مس کر سکی ۔۔اور اس رشتے کے دن جو میرے لیے سب سے بڑھ کر ہے۔۔
کہنے کو تو بہت کچھ ہے لیکن الفاظ نہیں مل رہے ہیں ویسے تو بہت رشتے ہیں لیکن یہ رشتہ میرے لیے بہت ہی خاص ہے ۔۔اپ میرے لیے خدا کی طرف سے ایک انمول تحفہ ہے وہ تحفہ جو بہت کم لوگوں کو اللّٰہ پاک آپ جیسے بھائی کی صورت میں عطا کرتا ہے۔۔بھائی بہنوں کی جان ہوا کرتے ہیں کہتے ہیں کہ وہ شخص بہت خوش نصیب ہوتا ہے جسے اپنے میسر ہوتے ہیں کیونکہ خونی اور سگے رشتے قدرت کا انتہائی خوبصورت اور لازوال عطیہ ہوتے ہیں جن کی قدر ہم پر لازم ہوتی ہے۔۔ایسے ہی رشتوں میں ایک رشتہ بھائی کا ہوتا ہے۔۔لفظ “بھائی”جو ہے نہ اس میں بہنوں کی پوری کائنات سمیٹی ہوتی ہیں بھائی اپنی بہنوں کا محافظ ہوتا ہے اور مان ہوتے ہیں بھائی کو اللّٰہ پاک نے بڑے دل بنایا ہوتا ہے دنیا کی بہت سی خوشیاں بھائیوں سے منسلک ہوتی ہے۔۔ دنیا میں ماں باپ کے بعد جو سب سے قریبی ،گہرا،اپنائیت و خلوص سے لبریز منفرد بے مثال خونی رشتہ ہے وہ بھائی کا رشتہ ہے بھائی کا درجہ والد جیسا ہوتا ہے۔۔والدین جیسا پیار اگر کوئی دے سکتا ہے تو وہ بھائی ہی ہوتے ہیں جو اپنی خواہشات کا گلا گھونٹ کے اپنی خواہشات کو بہنوں کی خواہشات و ضروریات پر قربان کرتے ہیں۔بھائی سخت نہیں ہوتے مگر وہ روتے نہیں ہیں کیونکہ ان کے رونے سے بہنوں کے حوصلے کمزور ہوتے ہیں۔۔
میرا اکلوتا بھائی ہے ۔۔میری زندگی ہے میری کل کائنات ہے میں جب بھی پریشان ہوتی ہوں تو میرا شہزادہ میری چہرے سے پہچان جاتا ہے کہ میری لاڈلی کو کیا پریشانی ہے۔۔ میں جب بیمار ہوتی ہوں میرے بھائی کو نیند نہیں آتی وہ مجھے دیکھتا رہتا ہے کہ میری لاڈلی کو کیا ہو گیا ہے۔۔کبھی کبھی مجھے ہسپتال لے جاتے وقت مجھے اپنے گود میں بیٹھا کر گاڑی تک لے جاتا ہے جب تک میں ٹھیک نہیں ہوتی ان کو سکون نہیں ملتا۔۔ ڈیوٹی سے آتے ہوئے جب بھی کوئی نئی بات ہوتی ہے تو سب سے پہلے مجھے بتاتا ہے۔۔جب کوئی چیز مانگنا ہو تو مجھے آواز دیتا ہے کبھی کبھی میں مزاق میں کہتی ہوں بھائی اب آپ کی بیٹی بڑی ہو گئی ہے ان سے مانگو تو ہنس کر بات ٹال دیتا ہے۔۔۔سکول جاتے وقت جب شہزادہ اپنے بچوں کو جیب خرچ دیتا ہے تو ساتھ مجھے بھی دیتا ہے۔۔میں ہنستی ہوں بھائی اب میں بچی نہیں ہوں بڑی ہو گئی ہوں تو کہتا ہے میرے لیے اب بھی چھوٹی ہو ۔۔کیونکہ میں اپنے بھائی کی سب سے آخری بہن ہوں۔۔ میرا بھائی جس کی پیار میں مفاد نہیں اس کو فکر ہے کہ میں خوش رہوں ۔۔ان کے جوتے پالش کرتے ہوئے مجھے سکون ملتی ہے ان کو ناشتہ دیتے وقت مجھے پوری دنیا کی خوشی محسوس ہوتی ہے۔۔کبھی کبھی ان پر غصہ کرتی ہوں تو بعد میں روتی ہوں اور منالیتی ہوں۔۔وہ جس کا دل بہت بڑا ہے جس کے دل میں پیار ہے سب بہنوں کے لیے پیار ہے مگر میں اپنی شہزادے کی بہت لاڈلی ہوں۔۔میری ہر دکھ ہر پریشانی ہر معاملے میں میرے ساتھ کھڑے ہونے والا میرا بھائی ہی ہے اللّٰہ پاک کی طرف سے میرے لیے رحمت اور نعمت ہے میرے بھائی۔۔
اختیار اگر کسی بات کا جو دے دے خدا مجھے تو” بھائی ” لفظ سے دکھ، تکلیف، مصیبت،پریشانی سب کچھ تیری زندگی سے ہی مٹا دوں۔۔یا اللّٰہ پاک میرے شہزادے کو صحت و تندرستی اور خوشیوں والی لمبی زندگی عطا فرما میرے بھائی کا سر ہم سب پر ہمیشہ قائم رکھنا۔۔۔ آمین
“”وقت ملے تو دیکھنا رشتوں کی کتاب کو کھول کر۔۔
بھائی کا رشتہ بھی ہر رشتہ سے لاجواب ہے””
اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔