شندور پولو فیسٹول کے لئے ٹیم سیلکشن ایک بار پھر تنازعے کا شکار,ڈی ٹیم کے دو کھلاڑی بلاوجہ ڈراپ،کمشنر ملاکنڈ سے نوٹس لینے کا مطالبہ

چترال(چترال ایکسپریس)شندور پولو فیسٹول کے لئے ٹیم سیلکشن ایک بار پھر تنازعے کا شکار ہوگئی،ریویوکمیٹی نے اپرچترال سے تعلق رکھنے والے ایک افیسر اوردیگر سفارشیوں کو ٹیم میں شامل کرکے چترال ڈی ٹیم کے دو کھلاڑی جومختلف ٹیموں میں سیلیکشن ہوکر اور اپنے زاتی گھوڑوں سے ٹورنامنٹ میں شریک ہوکر لیویز کے ساتھ سب سے دلچسپ مقابلے کے بعد 3/1 سے ہارنے والے سب سے اچھے اور فٹ گھوڑے ساتھ میدان میں اترنے والے شکیل احمد (ژانہ) اور سنئیر اور تجربہ کار کھلاڑی سکندر حیات  شندور میلے کے لئےسیلیکٹ ہونے کے بعد ٹیم سے باہرکردئیے گئے۔دونوں پروفیشنل کھلاڑیوں کو ڈراپ کرنے کے پیچھے دھونس،دھاندلی،سفارش اور اقربا پروری کاہاتھ ہے جس کی لاٹھی اس کی بھینس کا اصول کارفرما ہے اس لئے شریف اور پیشہ ور کھلاڑیوں کو قربانی کا بکرا بناکر شوقیہ فنکاروں کو موقع دیا گیا۔چترال کے پروفیشنل کھلاڑیوں اور پولو شائقین نے اپر چترال  کےایک افیسر اور دیگرسفارشیوں کو جگہ دینے کے لئے ماہر کھلاڑیوں کو ڈراپ کرنے پر شدید احتجاج کیا ہے اور جب تک شکیل احمد ژانہ اور سکندر حیات کو ٹیم میں بحال نہ کیا گیا احتجاج جاری رہے گا۔اُنہوں نے کمشنر ملاکنڈ سے اس بات کا نوٹس لنے کی درخواست کی اور کہا کہ ایسا نہ کرنے کی صورت میں اپنے جائز حق سے محروم شدہ کھلاڑی ڈی سی آفس کے سامنے دھرنا دیں گے اور بھوک ہڑتال پر مجبور ہوجائیںگے۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔