وزیراعلیٰ محمود خان کی زیرصدارت خیبرپختونخوا ٹیکنکل ایجوکیشن اینڈ ووکیشنل ٹریننگ اتھارٹی کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کا 20 واں اجلاس

پشاور(چترال ایکسپریس)خیبرپختونخوا ٹیکنکل ایجوکیشن اینڈ ووکیشنل ٹریننگ اتھارٹی کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کا 20 واں اجلاس جمعہ کے روزوزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان کی زیر صدارت منعقد ہواجس میں صوبے میں فنی تعلیم کے شعبے کو مستحکم بنانے کیلئے مختلف اُمور پر غور و خوض کے بعد متعدد اہم فیصلے کئے گئے ۔ سیکرٹری قانون مسعود احمد اور سیکرٹری صنعت ثاقب رضا کے علاوہ دیگر متعلقہ حکام اور بورڈ اراکین نے اجلاس میں شرکت کی ۔ اجلاس میں بورڈ کے گزشتہ اجلاس میں کئے گئے فیصلوں پر عمل درآمد کا تفصیلی جائزہ لیاگیا اور شرکاءکو آگاہ کیا گیا کہ گزشتہ بورڈ اجلاس کے فیصلے کی روشنی میں سسٹم آف ٹیکنکل اینڈ ووکیشنل ایجوکیشن اینڈ ٹریننگ (STVET) کے 12 تربیتی اداروں کو خیبرپختونخوا ٹیکنکل ایجوکیشن اینڈ ووکیشنل ٹریننگ اتھارٹی نے تحویل میں لے لیا ہے جبکہ پانچ مزید اداروں کو تحویل میں لینے پر پیشرفت جاری ہے ۔ اجلاس میںکے پی ٹیوٹا کے نظر ثانی شدہ بجٹ برائے مالی سال 2021-22 اور تخمینہ بجٹ برائے مالی سال2022-23 کی منظوری دی گئی ۔ اس موقع پر وزیراعلیٰ نے متعلقہ حکام کو کے پی ٹیوٹا کے ترقیاتی فنڈز کے استعمال کی شرح کو مزید بہتر بنانے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ صوبے میں فنی تعلیم اور پیشہ وارانہ تربیت کا فروغ صوبائی حکومت کی اہم ترجیحات میں شامل ہے ۔ اُنہوںنے مزید کہا کہ صوبائی حکومت نوجوانوں کو ہنر مند بنا کر انہیں بااختیار بنانے کیلئے ٹھوس اقدامات کر رہی ہے ۔ وزیراعلیٰ کا کہنا تھا کہ نوجوانوں کو فنی تعلیم اور پیشہ وارانہ تربیت فراہم کرکے صوبے سے بیروزگاری کا خاتمہ کیا جا سکتا ہے ۔ وزیراعلیٰ نے اس موقع پر محکمہ صنعت کے اعلیٰ حکام کو صوبے میں فنی تعلیم کے شعبے کو جدید عصری تقاضوںسے ہم آہنگ کرنے کیلئے لائحہ عمل ترتیب دینے کی بھی ہدایت کی ہے ۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔