صدر تجار یونین کی چترال انتظامیہ کیطرف سے بلاوجہ دوکانداروں کو پرشان اور بھاری جرمانہ کرنے کی مذمت

چترال(چترال ایکسپریس)صدر تجار یونین لوئر چترال بشیر احمد  نےایک اخباری بیان میں انتظامیہ چترال کی جانب سے  صوبائی حکومتوں کے جیب بھرو کریک ڈاؤن کی سخت الفاظ میں مذمت کی ہے۔
بشیر احمد نے گزشتہ روز انتظامیہ چترال کی جانب سے بلاوجہ چترال کے غریب دوکانداروں کو کریک ڈاؤن کے نام پر پرشان اور بھاری جرمانہ کرنے کوصوبائی حکومت کی جانب سے پیسے بنانے کی سازش قرار دیتے ہوئے کہا کہ  صوبائی حکومت کی جانب سے ضلع انتظامیہ کو دوکانداروں سے یومیہ لاکھوں روپے جمع کرنے کی ٹاسک سونپ دی گئی ہے ۔انہوں نے صوبائی حکومت کی جانب سے پیسے بناؤ کریک ڈاؤن کو غریب دوکاندار کے ساتھ ظلم قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ اگر انتظامیہ نے اس ناانصافی اور پیسے جمع کرنے کی کریک ڈاؤن کو نہ روکا تو اس ظلم اور ناانصافی کے خلاف بھرپور احتجاج کی جائے گی۔ شاپنگ بیگ کے پابندی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے صدر  نے کہا کہ جب تک انتظامیہ چترال میں شاپنگ بیگ کے متبادل کوئی حل نہیں نکالتی  تب تک دوکانداروں کو تنگ نہ کیا جائے۔ انہوں نے گزشتہ روز انتظامیہ کی طرف سے بازار کریک ڈاون میں موجودگی کی خبر کی سختی سے تردید پرزور مذمت کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس بات پر قائل نہیں کہ دوکانداروں کے ساتھ ہونے والے ظلم کا حصّہ بن جائیں۔صدر بشیر احمد نے کہا کہ میں اپنے دکانداروں کے ساتھ شانہ بشانہ کھڑا ہوں کھڑا رہوں گا اور ہر فورم پر ان کے حق کے لئے میں جنگ لڑوں گا چترال بازار کے تمام دوکانداروں نے میرے اوپر اعتماد کرکے مجھے ووٹ دے کر کامیاب کیا ہےمیں اپنے دوکانداروں کے اعتماد کو کبھی بھی ٹھیس پنچنے نہیں دونگا۔۔۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔