اپر چترال علاقہ کھوت سیلاب اور بارشوں سے متاثر عوام حکومتی توجہ اور امداد کے منتظر ہیں۔میر نظام الدین۔

اپر چترال (چترال ایلسپریس۔۔جمشیداحمدسے) کھوت بالا کے معروف سماجی و سیاسی شخصیت وی سی چیرمین کھوت بالا میر نظام الدین نے ایک اخباری بیاں میں حکومت اور دوسرے فلاحی اداروں سے اپیل کی ہے کہ علاقہ کھوت اپر چترال کا ایک دور افتادہ اور پسماندہ علاقہ ہے سطح سمندر سے کافی بلندی پر واقع ہونے کی وجہ سے اس علاقے میں اگست اور ستمبر کے مہینے میں فصلوں کی کٹاٸی کی جاتی ہے اس سال بھی فصلوں کی کٹائی ختم ہی ہوئی تھی اور فصلیں کھیتوں میں ہی پڑے تھے سیلاب اور سیلابی ریلوں نے تباہی مچادی اور تیار فصلوں کو بہا کر لے گۓ اور جوفصلیں سیلاب سے بچ گۓ وہ موسلادھار بارشوں سے تباہ ہوۓ اور کھیتوں میں ہی جڑین پکڑ لئے ہیں اور ناقابل استعمال ہیں اس کے علاوہ مویشیوں کیلئے جو بھنس چارہ اکھٹے کیے گۓ تھے شدید بارشوں سے مسلسل گیلا رہنے کی وجہ سے وہ بھی مکمل خراب ہو چکے ہیں اس وقت علاقے کی عوام کو سخت مشکلات کا سامنا ہے اور بہت متاثر ہیں ان مشکلات کی بنا پر حکومت بلخصوص صوباٸی حکومت متعلقہ محکمے اس سال گرین گداموں میں کم از کم گندم کی اسٹاک کو وافر مقدار میں یقینی بنایا جاۓ اس کے علاوہ اپر چترال انتظامیہ فلاحی ادارے جیسے اکاہ(AKAH) الخدمت فاونڈیشن، انجمن حلال احمر اور دوسرے فلاحی اداروں اور مخیر حضرات سے اپیل ہےکہ امتحان اور مشکل کی اس گھڑی میں متاثریں کے ساتھ امداد میں اپنا کردار ادا کریں.
۔۔۔یاد رہے اس طرح دوسرےعلاقوں لاسپور , یارخون,ریچ تریچ شاگروم وغیرہ کی یہی صورت حال ہے۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔