محکمہ جنگلات کی آسامیوں میں اپر چترال کو نظر انداز کرنا تشویشناک ہے۔ احمد محمد علی

چترال(چترال ایکسپریس)ممبر ویلیج کونسل کھوژ و جنرل سیکرٹری ( پی وائی آو ) اپر چترال احمد محمد علی نے ایک اخباری بیان انتہائی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ محکمہ جنگلات میں ملازمین کی بھرتی کے سلسلے میں اپر چترال کے باسیوں کیساتھ ہمیشہ سے ظلم ہوتا آرہا ہے۔ اب یہ ظلم و نا انصافی بند ہو جانا چاہیے ۔

انہوں نے کہا کہ محکمہ جنگلات خیبر پختونخوا ہرسال چترال میں فارسٹ گارڈ کی خالی آسامیوں کے لیے مختلف اخبارات میں اشتہارات چھپواتا ہے۔تاہم اس محکمے میں صرف لوئیر چترال کے لوگوں کو ہی بھرتی کی جاتی ہے۔ یہی وجہ ہے محکمہ جنگلات چترال میں کم و بیش ۱۵۰ فارسٹ گارڈ صرف چترال لوئیر سے محکمے سے خدمات سر انجام دے رہے ہیں ۔

محمد علی نے مزید بتایا کہ چترال دو اضلاع (لوئیر ، اپر ) میں تقسیم ہونے سے پہلے بھی چترال محکمہ جنگلات میں بطور فارسٹ گارڈ اپر چترال کے لوگوں کو بھرتی نہیں کئے جاتے تھے ۔ اب بھی محکمہ جنگلات خیبرپختونخوا کی جانب سے 84 فارسٹ گارڈ کی خالی آسامیوں کے لئے اشتہارات دئے گئے ہیں۔ لیکن افسوس کا مقام ہے 84 میں سے ایک اسامی بھی چترال اپر کے بے روزگار نوجوانوں کے لئے نہیں ہے۔

احمد محمد علی نے کہا کہ “میں ایم پی اے مولانا ہدایت الرحمن ، چیئرمین تحصیل کونسل مستوج ، چیئرمین تحصیل کونسل موڑکھو تورکھو اور ضلعی انتظامیہ چترال اپر سے درخواست کرتا ہوں کہ محمکہ جنگلات خیبرپختونخواہ سے اس مسئلے کے بارے میں پوچھا جائے اور اپر چترال کے ہزاروں بےروزگار نوجوان کے ساتھ ناانصافی کو بند کیا جائے ورنہ ہم محکمے کی ضلعی انتظامیہ کے سامنے تمام حقائق رکھ دیں گے”.

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔