لپکتے شعلے *..تحریر۔ مبشرالملک

آج کل مملکت خداداد پاکستان کا عجیب حال ہوا جارہا ہے۔ چاروں طرف پاکستانی ۔۔۔ مورچے۔۔۔ سنبھالے ہوئے ہیں ۔۔۔ عام آدمی سے لیکر ریاست کے۔۔۔ ناخداوں ۔۔۔ تک ۔۔۔ شعلے اگل۔۔۔ رہے ہیں ۔اور اس ٹرسیر فائر میں ۔۔۔ دوکان اور بازاروں میں ۔۔۔ عوام ۔۔۔ تعلیمی اداروں میں۔۔۔ اساتذہ اور طالب علم۔۔۔۔ اسپتالوں میں ۔۔۔ مریض اورڈاکٹرز۔۔۔۔ دفترات میں ۔۔۔ اسٹاف اور باس۔۔۔ ممبرو محراب میں۔۔۔ مقتدی اور آئیمہ عزام۔۔۔ ٹی وی اسکرین پر۔۔۔ وفادار انکیرز اور دانشور۔۔۔ یوٹیوپ میں۔۔۔ یوٹیوبرز اور ریٹایرڈ فوجی افیسرز۔۔۔ جلسہ گاہوں میں ۔۔۔۔ مریمی اور عمرانی۔۔ پھول جھڑیان۔۔۔ اسمبلی و سنیٹ میں۔۔۔ نمک حلال۔۔۔ ممبران۔۔۔ بارومز میں ۔۔۔۔ منشی و وکلاء۔۔۔ کورٹ رومز میں ۔۔۔ سایل اور منصف۔۔۔ ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ میں۔۔۔ جسٹیس صاحبان۔۔۔ سب سے دل ہلا دینے والا مناظر۔۔۔ ملک اور ملت کے محافظ ۔۔۔ کابینہ میں۔۔۔ وزیر و مشیرز۔۔۔ عوام کے منخب کردہ ۔۔۔ وزیر اعظم و صدر مملکت۔۔۔۔ سب کے سب پر ایک۔۔۔ ذکوٹا جن ۔۔۔ سوار ہے۔۔۔ سب کی آنکھین لال ہیں ۔ہر کوءی مار دھاڑ کے لیے ۔۔۔ آستین ۔۔۔چڑھائے تیار کھڑا ہے ۔۔۔ سرحدوں پہ کشیدگی کے ساءے ہیں ۔۔۔ برادر جون۔۔۔ افغانی ہمیں ۔۔۔ آنکھیں ۔۔۔ دیکھا رہے ہیں بلکہ ہمیں ۔۔۔ گھاس ڈالنے۔۔۔ کو تیار نہیں۔ معیشت۔ ۔۔ کے ساتھ۔۔۔ اخلاق۔۔۔ مروت۔۔۔ آدمیت۔۔۔ برداشت۔۔۔ پاکستانیت۔۔۔ کا بھی ۔۔۔ جنازہ۔۔۔ نکل چکا ہے۔۔۔ بس ۔۔۔ دفنانے۔۔۔ کا۔۔۔ عمل۔۔۔ باقی ہے۔۔۔ ایک ہی ادارہ۔۔۔ پاک فوج۔۔۔ جو پاکستان میں ۔۔۔ احترام وعزت کی نگاہ سے دیکھیجاتی تھی ۔۔۔ تمام برایوں کی جڑ اسے بنا کر قوم کے سامنے لاکھڑا کیا گیاہے۔۔۔ روز ۔۔۔ عادل راجہ۔ مہدی۔ اور دیگر معاروف ریٹاریرڈ فوجی افیسرز۔۔۔ فوجی جرنیلوں کو ۔۔۔ نشانے۔۔۔ پر بلکہ ۔۔۔ سولی۔۔۔ پر لٹکایے ہوے ہیں۔ حکومتی وزرا۔۔۔مریم نواز۔۔۔ خان اور ہواری۔۔۔ عدلیہ اور جنریلز کو ۔۔۔ نشانے پر رکھے ہوے ہیں یہ ادارے گلے لگا لیں تو ۔۔۔ محب الوطن۔۔۔ حق میں نہ ہوں تو۔۔۔ سازیشی اور غدار۔۔۔
۔۔۔ شاعر نے ان ہی حالات کے لیے کہا تھا۔
بازیچہ اطفال ہے دنیا میرے آگے
ہوتا ہے شب و روز تماشہ مرے آگے۔
اس بحرانی کیفیت سے ملک کو نکالنے کا فوری حل۔۔۔ شفاف انتخاب۔۔۔ ہی ہیں اس میں جتنی تاخیر کی گئی ملک اور اداروں کے لیے ۔۔۔ تباہی کا سونامی۔۔۔ ہی لائے گا۔
اس نازک صورت حال سے نکنے کے لیے۔۔۔ آرمی چیف ۔۔۔ کو بھی ۔۔۔حرکت۔۔۔ میں۔۔۔ برکت۔۔۔ ڈال کر سپریم کورٹ کا ساتھ دینا چاہیے ورنہ ۔۔۔ یہ سیاسی گند ایک بدبو دار ۔۔۔۔ طوفان ۔۔کی شکل اختیار کرکے بہت کچھ بہا لے جائے گی اور ۔۔۔۔ بچے کچے ۔۔۔ کباڑ اور کچرے۔۔۔ کو بھی ۔۔۔آرمی۔۔۔ نے ہی سنبھالنا ہے۔۔۔ یہ ۔۔۔عیار سیاست دان۔۔۔ ہمیں چھوڑ کر۔۔۔ کہیں دبی ۔جدہ لندن ۔پرس میں ۔۔۔ گھونسلہ۔۔۔ بنا ہی لیں گے مریم نواز کے بیانات دیکھ لک رہا ہے وہ پہلے۔۔۔ عدلیہ۔۔۔ سے ٹکرائے گی اس کے بعد۔۔۔ آرمی ۔۔۔ سے دو دو ہاتھ کرے گی ان کے لیے کھوار محاورہ۔۔۔ پھوک لوسی پلوم چاکھہ ۔۔۔ کے مشورے کے ساتھ عرض ہے۔

چاکو مہ دیاوا شرین نانی تو دونی لوڑے
بانگڑیے چیتی تہ ہوستی دونی نگہہ تو کڑیس۔
**

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔