نیشنل انسٹیٹیوٹ آف ہیلتھ ا ین آئی ایچ ریسرچ سنٹرکی چترال میں ذہنی امراض کے بارے میں دوروزہ ٹریننگ ورکشاپ

چترال (چترال ایکسپریس) نیشنل انسٹیٹیوٹ آف ہیلتھ ا ین آئی ایچ ریسرچ سنٹرخیبرمیڈیکل کالج پشاورکی طرف سے چترال میں ذہنی امراض کے بارے میں مطالعے کے سلسلے میں دوروزہ ٹریننگ ورکشاپ کا انعقاد کیا گیا ۔اس ٹریننگ کے تحت چترال کے تین یونین کونسل سے 45افرادکوٹریننگ دی گئی ۔ جس کا اہتمام کمیونٹی بیسڈ ویل بینگ ولنٹئیرز تنظیم نے کیا تھا۔ اتوار کے روز منعقدہ ورکشاپ کے سیشن میں لویر چترال کے تین یونین کونسلوں دنین، چترال Iاور چترال IIسے 45افراد نے شرکت کی۔ چترال میں خود کشی کے بڑھتے ہوئے رحجان اور ذہنی امراض میں مبتلا افرا د میں اضافے کے پیش نظر اس ورکشاپ میں اس بات پر زور دیاگیا کہ ذہنی دباؤ کے شکار افراد کی نشاندہی، انکی بروقت مشاہدہ اور متعلقہ شعبہ کے افراد کو مدد کے لئے رجوع کرانے کے فرائض نبھانے میں ولنٹئیرز اکلیدی کردار ادا کریں گے۔ پروگرام کے مہمان خاص اسسٹنٹ کمشنر لوئرچترال محمدعاطف جالب نے کہاکہ چترال میں ذہنی صحت کے متعدد مسائل کا سامنا ہے جو طلبا کی فلاح و بہبود کو متاثر کرتے ہیں۔ تعلیمی دباؤ، سماجی توقعات اور کئی مسائل کے بارے میں بیداری کی کمی جیسے عوامل ان مسائل کے پھیلاؤ میں معاون ہیں۔پروگرام کے ریسورس پرسن ریسرچ آفیسراین آئی ایچ ریسرچ سنٹرخیبرمیڈیکل کالج پشاورافتاب خان نے اس بات پر زور دیا کہ ذہنی مریض میں مبتلا افراد کی بروقت خبر گیر ی سے انہیں آسانی سے نارمل زندگی کی طرف واپس لائی جاسکتی ہے اور اس مطالعے اور سرگرمی کا مقصد بھی یہی ہے۔ اس پروگرام میں چترال ٹاؤن کے تین یونین کونسلوں کے علاوہ لوٹ کوہ کے تین یونین کونسل گرم چشمہ، ارکاری اور کریم آباد شامل ہیں۔پروگرام کے آخرمیں شرکاء ورکشاپ کوتعریفی اسناد سے نوازا گیا۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔