کھلا التجا ۔۔۔۔ بنام امیر العساکر پاکستان۔۔از طرف شہزادہ مبشر الملک

کھلا التجا ۔۔۔۔ بنام امیر العساکر پاکستان

قابل صد افتخار حافظ جنرل سید عاصم منیر صاحب ۔۔۔ اسلام علیکم۔
اگرچہ چیف جسٹس فایز عیسی صاحب نے ۔۔۔۔ صاحب ۔۔۔ لفظ بولنے اور لکھنے پر پابندی لگا رکھا ہے مگر ہماری روایت رہی ہے کہ ہم۔۔۔ آیین و قانون ۔۔۔ کی خلاف ورزی نہ کریں تو دل کو چین نہیں آتا ۔لہذا میں بھی روایات اور تہذیبی دستور کی پیروی کرتے ہوئے ۔۔۔ صاحب ۔۔۔ لکھنے کی جسارت کرتا ہوں ۔
فقیر کی ایک کمزوری یہ بھی ہے کہ ۔۔۔ حافظ اور سید۔۔۔ کے لیے عقیدت کے دروازے وا کیے رکھتا ہوں۔ اور ساتھ یہ امید بھی رکھتا ہوں کہ صاحب ان دو اعزازت کی عزمت و تکریم کا خیال بھی رکھیں گے

جباب امیر العساکر۔

جنرل باجوا دام براکات کے خان کے ساتھ
”ہوٕئے تم دوست جس کے دشمن اس کا آسمان کیوں ہو“
والا ۔۔۔ قومی مفاد ۔۔۔ کا کھیل اور ۔۔۔خان ۔۔۔ کا ۔۔۔ بزدارانہ ۔۔۔ محمودانہ ۔۔۔۔ تیلیانہ ۔۔۔۔ نو میانہ ۔۔۔ اور ۔۔۔ لوٹے یانہ ۔۔۔ دور کے انجام ۔۔۔ پانے کے بعد ۔
پی ڈی ایم ۔۔۔ کے تجربہ کارانہ ۔۔۔ اور۔۔۔ ماہرانا۔۔۔ کھیل نے جہاں ۔۔۔ عوام ۔۔۔ کو نہ صرف ۔۔۔ سمندری نمک ۔۔۔ چاٹنے پر مجبور کر رکھا ہے بلکہ ۔۔۔ ملک کی۔۔۔ معاشی نظام ۔۔ کوبھی ۔۔۔۔ مراقبے ۔۔۔ میں بیٹھا رکھا ہے۔
آگے بڑھنے سے قبل ان۔۔۔ پی ڈی ایمی ۔۔۔ یلغار۔۔۔ اور۔۔۔ عزائم کو اگر دو لفظوں میں بیاں کیا جقئے تو ۔۔۔۔ سیاست اور مسکراھٹ کے بادشاہ جناب زرداری صاحب کے نعرے کے یہ دو بول ہی آپ کے سمجھنے کو کافی ہیں۔
” مر سوں مر سوں ۔۔۔ قوم نہ بن سون ۔۔۔۔ ترقی نہ کر سون ۔۔۔ معشیت نہ بھر سون “

جناب امیر العساکر۔

اب آپ کے کندھوں میں دہشت گردی ۔۔۔۔ ملکی معیشت۔۔۔۔ سیاسی انتشار ۔الیکشن کی شفافیت ۔اس پر 42 ارب کے اخرجات کے باوجود ایسا لگ رہا ہے کہ الیکشن کے بعد اس کو ماننے کو کوٕئی تیار نہ ہوگا ایک ہارنے پہ کہے گا زیادتی ہوئی کیوں بند کیا۔کیول لیول نہ دیا ۔ ۔دوسرا کہے گا کیوں بلایا ۔کیوں دلوایا کے۔۔۔ درد ناک ۔۔۔ اقساط کاسوچ کر مجھے ڈر لگتا ہے نگران حکومت اور الیکشن کمیش نے قسم کھا رکھی ہے کہ اس ملک میں استحکام نہیں أنے دینا ۔امید ہے آپ نے ان خطرات کو ۔۔۔ جوش سے نہیں ہوش سے نمٹنے کے منصوبے بنارکھے ہوں گے۔

محترم ۔

اس لمبی تمہید کے بعد اصلی اورنقد گزارشات کی جانب بڑھتا ہوں ۔
1. این ایچ اے ۔۔۔ نام کے ہمارے ایک ادارے نے جو گزشتہ چند سالوں سے چترال ٹو گلگت روڈ کی تعمیر میں لگا ہوا ہے ۔ایک ۔۔۔خونخوار گدھ ۔۔۔ کی طرح اس ملک کے وسائل نوچ رہا ہے ۔پورا چترال ۔میڈیا اور ادارے گواہ ہیں کہ اس پراجیکٹ میں کیا ہورہا ہے آپ سے اس جانب فوری توجہ کی درخواست ہے۔

2. جیسا کے آپ کو معلوم ہے ہمارا چترال معدنیات سے بھر پور پہاڑی علاقہ ہے ۔یہاں کے مائنز اونیرز کو مختلف ہیلے بہانوں سے سرکاری ادارے کام کرنے نہیں دے رہے اور عام شہریوں میں ان تمام رکاوٹوں کے پیچھے ۔۔۔ ہماری سیکورٹی اداروں ۔۔۔ کو رکاوٹ بنا کر پیش کیا جارہا ہے جو چترال جیسے حساس ضلع کے لیے کسی طرح بھی سود مند نہیں یہاں کے باسی ہمیشہ فوج کے ساتھ رہے ہیں اور رہیں گے۔لیزا آپ ان رکاوٹوں کو دور کرنے محبتوں کو فروغ دینے اور روزگار کو بڑھانے کا زریعہ اور سہارا بنیے۔

3. چترال میں لوگوں کے معاشی سرگرمیان دم توڑ چکی ہیں پہلے افغانستان کے ساتھ ہمارے چار بارڈز سے آمد رفت ہوتی تھی جو مدتوں سے بند ہیں ۔لہذا ارندو۔ بدخشان ۔واخان بارڈرز پر کسٹم حکام بھیج کر اس دھرتی کو معاشی بر بادی سے بچانے کے آرڈر فرمائیں  یہ بارڈز دہشت گردوں کے لیے اتنے اسان نہیں جتنے خوفناک بناکر انہیں پیش کیا جارہا ہے ان کی سیکورٹی کے لیے یہاں کے موسمی حالات اور جغرافیے سے واقف لوگ ہی کا آمد ہوسکتے ہیں اور یہ طاقت ۔۔۔ چترال سکاوٹس ۔۔۔ کو حاصل ہے مزید اسے بہتر بنانے کے آپ ہی اقدامات کر سکتے ہیں۔
4. جس طرح آپ نے ذخیرہ اندوز۔ سمگلرز۔ مافیاز ۔کے خلاف اپرشن کر رکھا ہے اس کو پھیلا کر سیاست کے مافیاز۔کی جانب بھی موڑ دیں ۔بہتر ہوگا ۔۔۔ پانچ ہزار والے ۔۔۔ نوٹ کو ختم یا بدل دین ۔اور کاروبار میں بے جا رکاوٹوں کو ڈنڈا مار دیں ۔سود کے خاتمے کے لیے ۔۔۔۔ حافظانہ اور سیدانا۔۔۔۔ اقدمات فوری اٹھا کر ۔۔۔ الہی امیر العساکر ۔۔۔ ہونے کا ثبوت دیں کیونکہ الہی اور نعرہ تکبر والی فوج ۔۔۔۔ اللہ جبارو قہار سے لڑإی نہیں لڑ سکتی۔
دعا گو حقیرو فقیر
مبشرالملک چترال

ا

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔