داد بیداد…پشاور کی عظمت رفتہ…ڈاکٹر عنایت اللہ فیضی

کسی پشوری کو پشاور کی یاد ستاتی ہے تو بات کا رخ لا محالہ پشاور کی عظمت رفتہ کی طرف موڑ دیتا ہے چترال کے تھری سٹار ہوٹل کی لابی میں آصف بھائی کے ساتھ ملاقات میں ایسا ہی ہوا، آصف آج کل دوبئی میں ہوتے ہیں اسلام اباد میں گھرہونے کے باوجود بچوں کو پشاور میں رکھا ہوا ہے میں نے کہا یہ پشاور سے محبت کا ثبوت ہے وہ بولے ”ادنیٰ سی کوشش“ہے ہم سدا کے پر دیسی ثبوت کب دے سکتے ہیں میں نے کہا پشاور سے باہر ڈاکٹر ظہوراحمد اعوان کسی پشوری سے ملتے تو ملنے والے کو پشاور کا روڑا کہتے اور ایسا ہی لکھتے تھے ڈاکٹر ظہور احمد اعوان کے ذکر سے بات کوچہ ادب میں داخل ہوئی خا طر غزنوی کی کتاب ایک کمرہ کا ذکر آیا، ممتاز عسکری اور استاد بشیر کا ذکر آیا پھر ضیا جعفری سے لیکر فارغ بخا ری، رضا ہمدانی، طٰہٰ خا ن اور نا صر علی سید تک کئی بڑے بڑے ناموں کا ذکر ہوا جہاں تک کہ جو ن ایلیا اور راحت اندوری بھی زیر بحث آئے آصف صاحب نے علی اویس خیا ل کی ڈاکو مینٹری شہر کی فصیل اور فصیل کے تاریخی دروازوں کے تفصیلی تعارف کو سرا ہا گندھا را ہند کو بورڈ اور گندھا را ہند کو اکیڈ یمی کا ذکر خیر ہوا میں نے کہا فصیل شہر اس کا ہارڈ وئیر ہے آصف صاحب بولے آپ ہارڈ وئیر کو محفوظ نہیں کر سکتے تو سوفٹ وئیر کی بات کس طرح کر سکتے ہیں وہ تو نظر آنے والی چیز نہیں میں نے آصف صاحب کو بتا یا کہ پنجاب حکومت گذشتہ 30سالوں سے لا ہور کی قدیم عمارتوں کو محفوظ کرنے کے منصو بے پر کام کر رہی ہے 30سالوں میں 10بار حکومتیں بدل گئیں مگر لا ہور کے تاریخی ورثے کی حفاظت کا منصو بہ کسی حکومت کے جانے اور کسی کے آنے سے متاثر نہیں ہوا، شاہی قلعہ کا کام مکمل ہوا ہے فصیل شہر کے اندر مسجدوزیر خان اور شاہی حمام کا کام بھی مکمل ہوا ہے فصیل شہر کی اتھارٹی (Walled City Authority) ایک آزاد اور خود مختار اتھارٹی ہے پنجاب کا ہر آنے والا وزیر اعلیٰ اس کے کام میں معاون کا کردار ادا کرتا ہے مگر پشاور کی فصیل کو یا فصیل شہر کے اندر واقع تاریخی عمارتوں کو ایسی سر پرستی کبھی میسر نہیں آئی آصف بھائی نے میری بات کاٹ کر کہا آئیندہ بھی میسر نہیں آئیگی میں نے کہا کیوں؟ آصف بھائی بولے ہمارے صوبے کی سیا ست میں ذہنی بلوغت نہیں یہاں سیا ست کو بچوں کا کھیل اور فصیل شہر کے اندر کی قدیم تعمیرات کو بچوں کے گھروندوں کی حیثیت دی جا تی ہے خود شہر کے لو گوں میں یہ شعور نہیں کہ شہر کی عظمت رفتہ کو کس طرح بحا ل کیا جا ئے! میں نے کہا پشاور کا سوفٹ وئیر بھی اس شعور کی نا پختگی کے باعث برباد ہوچکا ہے آصف صاحب نے کہا دمشق اور بغداد میں قصہ کہانیاں سنا نے کے لئے بیروت اور عمان سے قصے سنانے والے بھاری معاوضہ پر بلا ئے جا تے ہیں ہزاروں سامعین سینکڑوں ڈالر کے ٹکٹ خرید کر قصے سنتے ہیں، پشاور کے ایک مشہور بازار کا نام قصہ خوانی ہے مگر آج قصہ خوانی کا وہ دستور کدھر ہے؟ میں نے اس کو مژدہ سنایا کہ اسلا م آباد میں جب لوک ورثے کا میلہ لگتا ہے، تو میلے میں قصہ خوانی کے سٹال پر لنگی میں ملبوس یا قراقلی ٹوپی زیب سر کئے ایک قصہ خواں گاؤتکیہ لگائے بیٹھا ہوتا ہے اس کے گرد قصے سننے کے شوقین حلقہ بنائے بیٹھتے ہیں اور قصہ سنتے ہوئے اس کو داد دیتے ہیں، آصف بھائی کو پشاور کا بھا ئی چارہ، اس کاکھلا ڈھلا ماحول، شہر کے باغات کی سیر اور رات گئیے بازاروں میں گھومنے والوں کی گہما گہمی کا پرانا ماحول بہت یاد آتا ہے 1979کے بعد پڑو سی ملک میں خانہ جنگی ہوئی لوگ گھر بارچھوڑ کر پشاور آئے نہ جا نے کس طرح اس شہر بے مثال پر خوف کا سایہ بیٹھ گیا، گھر سے با ہر نکلتے ہوئے خو ف آنے لگا ہمارے بچے خوف کی اس فضا میں پلے بڑھے راتوں کو گلیوں میں ہونے والی گہما گہمی مفقود ہوگئی میں نےکہایہ ایک نا ول کا موضوع ہے ایسا ناول جس پر فلم بھی بن سکتی ہے آصف بھائی نے میرے ساتھ اتفاق کیا، یوں ہم دونوں نے ایک یخ بستہ صبح کو چترال میں بیٹھ کر پشاور کی عظمت رفتہ کو یادکیا
ّذوق کسی ہمدم دیر ینہ کا ملنا بہتر ہے ملا قات مسیحا و حضر سے

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔