لیگل ایڈ پروگرام فار ہیومن رائٹس کے زیر اہتمام صنفی بنیاد پر تشددکے خاتمے کے لئے لویر چترال ڈسٹرکٹ کی مانیٹرنگ کمیٹی کا سہ ماہی اجلاس

چترال (چترال ایکسپریس)لیگل ایڈ پروگرام فار ہیومن رائٹس (LAPH)کے زیر اہتمام صنفی بنیاد پر تشددکے خاتمے کے لئے لویر چترال ڈسٹرکٹ کی مانیٹرنگ کمیٹی کا سہ ماہی اجلاس مقامی ہوٹل میں منعقد ہوا جس میں ضلعی انتظامیہ۔ پولیس اور،سوشل ویلفئر اور دوسرے کسی ڈیپارٹمنٹس کے افسران کے علاوہ سول سوسائٹی تنظیموں کے نمائندے شریک ہوئے۔ اجلاس کے شرکاء نےخواتین کے خلاف ہراساں کیے جانے کے واقعات پر قابو پانے کے لیے لڑکیوں کے لیے نجی طور پر قائم ہاسٹلز میں سیکورٹی اور دوسرے سہولیات کی فراہمی کے ساتھ ساتھ ایس اوپیز پر عملدرآمد پر زور دیا۔
کمیٹی کے اراکین نے صنفی تشدد کی طرف لے جانے والے کچھ ممکنہ مسائل پر تبادلہ خیال کیا اور ابتدائی مراحل میں ان کو حل کرنے کے طریقے وضع کئے۔
اسسٹنٹ کمشنر چترال ڈاکٹر عاطف جالب نے کہا کہ اس وقت صنفی تشدد سے محفوظ رکھنے کے لئے خواتین کو ڈیجیٹل سیکورٹی فراہم کرنے کی ضرورت ہے ۔سو
شہر میں طالبات کے پرائیویٹ ہاسٹلوں سے پیدا ہونے والے مسائل کا نوٹس لیتے ہوئے ڈاکٹر جالب نے کہا کہ تمام ہاسٹلز کا سیکورٹی آڈٹ بروقت کرایا جائے گا تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ قیدی ہر قسم کے خطرات سے محفوظ رہیں۔ سائبر پر مبنی ہراساں کرنا۔
اس سے قبل شرکاء نے لڑکیوں کے پرائیویٹ ہاسٹلز کی ترقی کی طرف اشارہ کیا اور وہاں موجود ناکافی حفاظتی نظام کی طرف توجہ دلائی گئی تھی۔
انہوں نے کام کی جگہوں پر خواتین کو ہراساں کرنے کے خلاف تحفظ کی طرف بھی توجہ دلائی اور کہا کہ تعلیم کے عام ہونے سے خواتین کی زیادہ تعداد سرکاری، نیم سرکاری اور پرائیویٹ سیکٹر کے اداروں میں بطور ملازم شامل ہو رہی ہے جن کی ضرورت ہے۔ سیکورٹی
اپنے خدشات کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کے پی کے 2010 ءکے ایکٹ برائے تحفظ خواتین کو کام کی جگہوں پر ہراساں کرنے کے خلاف، سرکاری اور نجی شعبے میں ہر ایک ادارہ انکوائری کمیٹی بنانے کا پابند تھا لیکن شاید ہی کسی ادارےمیں یہ کمیٹی موجود ہے۔
انہوں نے ضلع میں مختلف سرکاری محکموں کی جانب سے خواتین کو ملازمت دینے سے انکار پر بھی اپنے تحفظات کا اظہار کیا اور کہا کہ حکومت نے کم از کم 5 فیصد کوٹہ مقرر کیا تھا لیکن کئی اداروں میں ایک بھی خاتون ملازم نہیں ہے۔
ایل اے پی ایچ کے پروگرام مینیجر قاضی عرفان نے اجلاس کو بتایا کہ ان کی تنظیم صنفی تشددکے متاثرین کے لیے ایک ڈائرکٹری مرتب کر رہی ہے تاکہ وہ مصیبت کے وقت متعلقہ فورم سے مدد حاصل کرسکیں۔
سیشن میں ڈی ایس پی (لیگل) شیر محسن الملک، چائلڈ پروٹیکشن آفیسر اسد اللہ، دارالامان کی منیجر آسیہ اجمل، ڈگری کالج کے نمائندے پروفیسر شفیق احمد، اے کے آر ایس پی کی جینڈر آفیسر شازیہ سلطان، قانونی مشیر الطاف گوہر ایڈووکیٹ، انسانی حقوق کے کارکن نیاز حسین شامل، نیازی اے نیازی ایڈووکیٹ، مسلم ایڈ کے اصحاب احمد اور شاعرہ اور دوسرے موجو تھے۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔