صوبائی حکومت پلے گراﺅنڈ ز کے قیام اور کھیلوں کی دیگر سہولیات کی فراہمی کیلئے مربوط حکمت عملی کے تحت کام کر رہی ہے۔وزیراعلیٰ محمودخان

پشاور(چترال ایکسپریس)وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان نے کھیلوں کی سرگرمیوں کے فروغ کو اپنی حکومت کی ترجیحات کااہم حصہ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ صوبائی حکومت نوجوانوں کو کھیلوں کی سہولیات فراہم کرنے کیلئے اضلاع، تحصیل اور یونین کونسل کی سطح پر پلے گراﺅنڈ ز کے قیام اور کھیلوں کی دیگر سہولیات کی فراہمی کیلئے ایک مربوط حکمت عملی کے تحت کام کر رہی ہے اور اس مقصد کیلئے اربوں روپے مالیت کے متعدد منصوبوں پر پیشرفت جاری ہے۔ ان منصوبوں کی تکمیل سے نوجوانوں کو کھیلوں کی سہولیات مقامی سطح پر فراہم کرنے میں بہت زیادہ مدد ملے گی اور اس طرح نوجوانوں کی صلاحیتیں مثبت سرگرمیوں میں صرف ہوں گی اور ایک صحت مند معاشرے کا قیام ممکن ہو سکے گا۔
ان خیالات کا اظہار اُنہوں نے بدھ کے روزیونین کونسل کی سطح پر پلے گراﺅنڈز کے قیام سے متعلق ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا جس میں یونین کونسل کی سطح پر پلے گراﺅنڈ ز تعمیر کرنے کے منصوبے پر اب تک کی پیشرفت کا تفصیلی جائزہ لیا گیااور ان پلے گراﺅنڈ ز کی تعمیر کیلئے موزوں اراضی کے حصول کا طریقہ کار اور منصوبے پر عمل درآمد سمیت دیگر متعلقہ اُمور سے متعلق اہم فیصلے کئے گئے۔ایڈیشنل چیف سیکرٹری شہاب علی شاہ، وزیراعلیٰ کے پرنسپل سیکرٹری امجد علی خان، سیکرٹر ی سپورٹس محمد طاہر اورکزئی، سیکرٹری پلاننگ شاہ محمود، ڈائریکٹر جنرل اسپورٹس خالد خان اور دیگر متعلقہ حکام نے اجلاس میں شرکت کی ۔ منصوبے کے مختلف پہلوﺅں کے حوالے سے اجلاس کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ یہ منصوبہ تقریباً تین ارب روپے کی لاگت سے مالی سال 2024-25 میں مکمل کیا جائے گا جس کے تحت یونین کونسل کی سطح پر دو مختلف کیٹگریز کے پلے گراﺅنڈ تعمیر کئے جائیں گے ، پہلی کیٹگری کے پلے گراﺅنڈ زجن کیلئے زمین کی خریداری درکار ہو، 28 ملین روپے کی لاگت جبکہ دوسری کیٹگری کے پلے گراﺅنڈ جن کیلئے زمین کی خریداری درکار نہ ہو 15 ملین روپے کی لاگت سے مکمل کئے جائیں گے ۔ مزید بتایا گیا کہ منظور شدہ طریقہ کار کے مطابق ہر یونین کونسلز میں ایک پلے گراﺅنڈ تعمیر کیا جائے گا تاہم ضرورت کی بنیاد پر بعض یونین کونسل میں ایک سے زیادہ پلے گراﺅنڈ ز بھی تعمیر کئے جائیں گے ۔ وزیراعلیٰ نے منصوبے کو صوبائی حکومت کی اسپورٹس پالیسی کی روشنی میں نوجوانوں کو اُن کی دہلیز پر کھیلوں کی سہولیات فراہم کرنے کیلئے اہم منصوبہ قرار دیتے ہوئے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ منصوبے پر بروقت عمل درآمد شروع کرنے اور اس کی مقررہ مدت کے اند ر تکمیل کو یقینی بنانے کیلئے حقیقت پسندانہ ٹائم لائنز مقرر کر کے اُن کے مطابق عملی پیشرفت کیلئے ضروری اقدامات اُٹھائے جائیں تاکہ صوبے کے نوجوان بغیر کسی تاخیر کے کھیلوں کی ان سہولیات سے مستفید ہو سکیں۔ اُنہوںنے متعلقہ حکام کو مزید ہدایت کی کہ ان پلے گراﺅنڈز کی تعمیر کیلئے موزوں اراضی کی نشاندہی اور خریداری سمیت منصوبے پر عمل درآمد کے طریقہ کار کو آسان بنایا جائے ۔ وزیراعلیٰ نے محکمہ اسپورٹس کے حکام کو ارباب نیاز کرکٹ اسٹیڈیم کی اپ گریڈیشن کے منصوبے پر کام اسی سال جولائی کے آخر تک مکمل کرنے کیلئے بھی ضروری اقدامات اُٹھانے کی ہدایت کی۔ دریں اثناءوزیراعلیٰ نے محکمہ سیاحت، کھیل اور اُمور نوجوانان کے اُمور کو مزید بہتر انداز میں چلانے کیلئے ایک اجلاس کی بھی صدارت کی جس میں کھیل اور اُمور نوجوانان کو محکمہ سیاحت سے الگ کرکے ایک الگ محکمے کا درجہ دینے کی تجویز پر غور کیا گیا تاکہ ان الگ الگ شعبوں کے اُمور مزید بہتر اور پیشہ وارانہ انداز میں انجام دیئے جاسکیں۔ وزیراعلیٰ نے متعلقہ حکام کو اس سلسلے میں ایک مہینے کے اندر قابل عمل پلان تشکیل دے کر پیش کرنے کی ہدایت کی۔ وزیراعلیٰ نے متعلقہ حکام کو محکمہ زراعت اور لائیو سٹاک کو بھی دو الگ محکموں میں تقسیم کرنے کیلئے ہوم ورک تیار کرنے کی ہدایت کی ۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔