تازہ ترین

پیراگلائڈنگ ایسوسی ایشن کو چترال کے چند مفاد پرست عہدہ داروں نے ہائی جیک کیا۔ایسوسی ایشن بانی ممبران کا پریس کانفرنس

چترال ( نمائندہ چترال ایکسپریس ) ہندو کُش ایسوسی ایشن فارپیراگلائڈنگ (ہیکاپ)کے بانی ممبران اور عہدہ داروں نے دعوی کیا ہے ۔ کہ بونی میں قائم کردہ اس پیراگلائڈنگ ایسوسی ایشن کو چترال کے چند مفاد پرست عہدہ داروں نے اپنے اثرو رسوخ اور دھوکا دہی کی بنیاد پر ہائی جیک کیا ۔ اور چترال میں پیرا گلائڈنگ کی ترقی کیلئے ملنے والی فنڈ کو خرد برد کرکے اس کو نا قابل تلافی نقصان پہنچایا ۔ چترال پریس کلب میں ایک پریس کانفرنس سے DSC00349خطاب کرتے ہوئے ایسوسی ایشن کے بانی ممبران ظہیرالدین بابر ، سید مظفر خان ، جنرل سیکرٹری سرور خان ودیگر نے کہا ۔ کہ ایسوسی ایشن کی رجسٹریشن اور جملہ دستاویزات بطور ریکارڈ اُن کے پاس موجود ہیں ۔ جس میں واضح الفاظ میں ہیکاپ کی رجسٹریشن بونی کے پتے پر کی گئی ہے ۔ لیکن بدقسمتی سے جن پر اعتماد کرکے صدر کا عہدہ انہیں تفویض کیا گیا ۔ انہوں نے ایسوسی ایشن کے قواعدکی دھجیاں اُڑا کر نہ صرف ملنے والے فنڈ میں بڑے پیمانے پر کرپشن کی ۔ بلکہ غیر قانونی طور پر چترال میں اپنے دوستوں کو ایسوسی ایشن میں جگہ دی ۔ اور اصل ممبران کو کو کھڈے لائن لگا دینے کی ناکام کوشش کی ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ سابق صدر سیف اللہ جان اور شہزادہ فرہاد عزیز مجموعی طور پر ایسو سی ایشن کے بیس لاکھ روپے کے فنڈ ہڑپ کر گئے ہیں ۔ جبکہ یہ فنڈ پائلٹوں کیلئے گلائڈر ز کی خریداری اور دیگر سہولیات کی فراہمی کیلئے دیا گیا تھا ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ ان کے اس اقدام کے خلاف ضلعی انتظامیہ اور دیگر حکام کو بھی آگاہ کر دیا گیا ۔ لیکن مذکورہ افراد اپنے اثر و رسوخ اور تعلقات کی بنیاد پر خود کو بچانے میں تاحال کامیاب رہے ہیں ۔ ظہیر الدین نے کہا ۔ کہ سرکاری سطح پر ملی بھگت سے ہم پر دباؤ ڈالنے ، ہراسان کرنے اور پھنسانے کیلئے انکوائری کا آغاز کیا گیا تھا ۔ لیکن تمام تر عمل خود اُن کے خلاف جانے کی وجہ سے یہ انکوائری روک دی گئی ۔اور کرپشن کے مر تکب عناصر کو بچا لیا گیا ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ اُس انکوائری کو سامنے لایا جائے ۔ تاکہ دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے ۔ انہوں نے کہا ۔ ہیکاپ اپنا قا نونی حق محفوظ رکھتا ہے ۔ اور ہیکاپ کے نام پر چترال میں پیراگلائڈنگ کا کوئی بھی دوسرا ایسوسی ایشن قانونی طور پر غلط اور قواعد و ضوابط کے خلاف ہے ۔ جبکہ اصل ہیکاپ ایک رجسٹرڈ ایسوسی ایشن ہے۔ جس کا نام ، وسائل اور مراعات کو استعمال کرنے کا حق کسی دوسرے کو نہیں پہنچتا۔

Advertisements

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں

متعلقہ

اترك تعليقاً

زر الذهاب إلى الأعلى