بیسک ایجوکیشن کمیونٹی بیسڈ سکول چترال اپر اور لوئیر کے خواتین اساتذہ کی مطالبات کی حق میں احتجاجی مظاہرہ و پریس کانفرنس

چترال( نمائندہ چترال ایکسپریس ) بیسک ایجوکیشن کمیونٹی بیسڈ سکول چترال اپر اور لوئیر کے خواتین اساتذہ مس فوزیہ۔ساجدہ۔بلقیس بی بی۔مصرانہ اور آفتاب جبین نے دیگر کے ہمراہ چترال پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم گزشتہ 23سالوں سے انتہائی قلیل تنخواہ پر بچوں کو پڑھا رہی ہیں۔سن 2018کو ہمارے تمام81سکولز وفاق سے صوبے کو منتقل ہوئے۔تو صوبہ خیبر پختونخوا کے سکریٹری ایجوکیشن نے ایک سال کے اندر ہماری ملازمتیں مستقل کرنے کا نوٹفیکیشن جاری کرتے ہوئے ہمارے سکولز ایلمنٹری ایجوکیشن فاؤنڈیشن کی تحویل میں دیا۔تب سے ہم سہولیات سے محروم ہیں۔نہ ہمیں مستقل کیا گیا اور نہ ہمیں گزشتہ 16 مہینوں سے تنخواہیں دی گئی۔مہنگائی کے اس دور میں ہم سکول،گاڑی کے کرائے اور بچوں کے کتابوں کا خرچہ اپنی جیبوں سے کیسے برداشت کریں گے۔ ہر سکول میں کم از کم 50سے زیادہ بچے پڑھ رہے ہیں۔اگر ہم پڑھائی چھوڑ دیں گی تو ان تمام بچوں کا تعلیمی مستقبل تباہ ہو جائے گا۔انہوں نے حکومت سے پر زور مطالبہ کیا کہپ ان کی ملازمتیں مستقل کی جائیں۔سولہ مہینوں کی تنخواہ ادا کی جائیں اور بچوں کو کتابیں فراہم کی جائی۔بصورت دیگر وہ بھوک ہڑتال کرکے دھرنا دیں گے اور مطالبات کی منظوری تک اپنا احتجاج جاری رکھیں گی۔بعد ازان خواتین اساتذہ نے احتجاجی مظاہرہ کرتے ہوئے اپنی مطالبات کا اعادہ کیا۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔