کوارڈینیٹر ایف پی سی سی آئی خیبر پختونخوا سرتاج احمد خان کی سمال انڈسٹریل ڈیویلپمنٹ بورڈ ( ایس آئی ڈی بی ) کے مینیجنگ ڈائریکٹر افتحار عالم کے ساتھ اہم میٹنگ

صوبائی حکومت اکنامک زون کے ساتھ ساتھ انڈسٹریل اسٹیٹس کے پراپرٹی ٹیکسز بھی معاف کر دیں۔ سرتاج احمد خان

پشاور (چترال ایکسپریس)فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری خیبر پختونخوا کے کوارڈینیٹر سرتاج احمد خان کا سمال انڈسٹریل ڈیویلپمنٹ بورڈ کے منیجنگ ڈائریکٹر افتخار عالم کے ساتھ ان کے دفتر میں اہم میٹنگ کی ۔ میٹنگ کا مقصد صوبے میں چھوٹی صنعتوں کے فروع، انڈسٹریل اسٹیٹ میں پراپرٹی ٹیکسز کی معافی اور ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ڈیپارٹمنٹ کی جانب سے کوہاٹ اور پشاور انڈسٹریل اسٹیٹ میں صنعت کاروں کو غیر ضروری طور پر تنگ کرنے جیسے مسائل کو زیر بحث لانا تھا ۔اس موقع پر کوارڈینیٹر سرتاج احمد خان کا کہنا تھا کہ کسی بھی ملک کی ترقی میں چھوٹے اور گھریلو صنعتوں کا کلیدی کردار ہوتا ہے کیونکہ ان صنعتوں کے ساتھ آبادی کی بڑی اکثریت کی وابستگی ہوتی ہے ، یہی وجہ ہے کہ ان چھوٹے صنعتوں کی ترقی سے ملک ترقی کے منازل طے کرتا ہے اس لئے ضرورت اس امر کی ہے کہ صوبے میں چھوٹی صنعتوں کو مزید ترقی دیا جائے۔ سرتاج احمد خان نے بتایا کہ صوبائی حکومت نے اکنامک زون کے پراپرٹی ٹیکس معاف کرنے کا فیصلہ کیا ہے جو کہ احسن اقدام ہے تاہم اس نوٹیفکیشن میں انڈسٹریل اسٹیٹ کے ٹیکسز معاف نہیں کئے گئے ہیں یہ چھوٹے صنعت کاروں کے ساتھ سراسر ظلم و زیادتی کے مترادف ہے۔ اور حکومت کو انڈسٹریل اسٹیٹ کے پراپرٹی ٹیکس بھی معاف کرنا چاہئے جس پر ایم ڈی افتخار عالم نے بھی اتفاق کیا اور کہا کہ ہم اس اہم مسئلے کو صوبائی حکومت اور صوبائی وزیر کے ساتھ زیر بحث لائیں گے ، سرتاج احمد خان نے بتایا کہ ایکسائز ڈیپارٹمنٹ کوہاٹ اور پشاور کے انڈسٹریل اسٹیٹ میں صنعت کاروں کو غیر ضروری طور پر ہراسان کررہے ہیں جس سے کاروبار پر تباہ کن اثرات مرتب ہورہےہیں اس سلسلے کو فی الفور ختم ہونا چاہئے۔ افتخار عالم نے اس بات سے بھی اتفاق کیا اور ایف پی سی سی آئی کے ساتھ مل کر اس مسئلے کو حل کرنے کی یقین دہانی کرائی۔ اس ملاقات میں ایس آئی ڈی بی کے ڈپٹی منیجنگ ڈائریکٹر نعمان فیاض بھی موجود تھے۔
اس موقع پر چترال اکنامکس زون کے حوالےسے تفصیلی گفتگوہوئی جبکہ اپر چترال میں پرواک لشٹ میں بھی انڈسٹریل زون کے قیام کے حوالے سے حائل رکاؤٹوں کو دور کرنے پر بھی بات چیت ہوئی ۔ جس کے جواب میں ایم ڈی نے بتایا کہ اس سلسلے میں کنسلٹنٹ ہائر کیا گیا ہے جو دیر اپر و لوئر اور چترال کے اکنامکس زون اور انڈسٹریل اسٹیٹس کی فیزیبلٹی تیار کریں گے۔
اس کے علاوہ چترال میں چھوٹے گھریلو صنعتوں بالخصوص ہنڈی کرافٹس وغیرہ کو ترقی دینے کے حوالےسے ایف پی سی سی آئی اور ایس آئی ڈی بی نے مل کر کام کرنے کے عزم کا اعادہ کیا۔

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔