جماعت اسلامی چترال لوئر کی جانب سے روڈوں پر کام کی بندش،اٹا ملوں اور لوڈشیڈنگ کے خلاف احتجاجی جلسہ

چترال(نمائندہ چترال ایکسپریس )جماعت اسلامی چترال لوئر کی جانب سے چترال کے اندر مختلف روڈوں پر کام کی بندش کے خلاف ایک احتجاجی جلسہ زیر صدارت مولانا جمشید احمد امیر جماعت اسلامی چترال منعقد ہوا۔
جلسے خطاب کرتے ہوئے مقررین نےکہا کہ گزشتہ ایک سال سے چترال شندور روڈ،چترال دروش روڈ اورچترال بمبوریت روڈ کی توسیعی کام جاری تھا لیکن اب چترال شندور روڈ اور بمبوریت روڈ پر کام کو بند کیا گیا ہے فنڈز دوسرے اضلاع منتقل کیے گئے ہیں اور چترال کے سرکاری گودام سے گندم چترالی عوام کو دینا بند کیا گیا ہے اور سرکاری گودام سے سبسیڈی ریٹ پر گندم چترال لوئر کے 5 ملوں کو دیا جا رہا ہے۔اور چترال ملز سے ناقص آٹا سرکاری ریٹ پر عوام کو دیا جا رہا ہے۔
انہوں نے کہا کہ چترال کے مختلف روڈون کو من پسند ٹھیکیداروں کو ایک ڈیل کےتحت دیے گئے ہیں جس کی وجہ سے چترال کے روڈوں کے نام پر متعلقہ ادارے فنڈز ہڑپ کر رہے ہیں۔اس کرپشن میں ضلعی انتظامیہ، محکمہ CNW اور ٹھیکیدار بھی ملوث ہیں۔ جس کی ہم مذمت کرتے ہیں۔چترال کے سرکاری گودام سے سبسیڈی ریٹ پر گندم آٹا ملوں کو دیا جا رہا ہے اور آٹا مل سے ناقص آٹا ہمیں دیا جا رہا ہے۔عوامی مطالبہ ہے کہ سرکاری گودام سے چترال ملوں کو گندم دینا بند کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ محکمہ واپڈا واجبات کے نام پر چترال شہر میں روزانہ 5/6 گھنٹہ لوڈشیڈنگ کروا رہا ہے ۔انہوں نےواپڈا حکام سے مطالبہ کیا کہ جس کے اوپر بقایا جات ہیں ان کا کنکش کاٹی جائے اور چترال شہر میں فوری طور پر لوڈشیڈنگ کو ختم کیا جائے ورنہ ہم واپڈ افس کو تالہ لگا دیں گے۔
اُنہوں نے کہا کہ اٹا ملز والے فی بوری گندم 4500 روپے میں سرکاری گودام سے سبسیڈی ریٹ پر خرید کر مہنگے داموں اٹا عوام کو دیتے ہیں۔جو کہ چترالی عوام کے اوپر ظلم ہے۔انہوں نےمطالبہ کیا کہ چترال میں اٹا ملوں کو فوری طور پر ختم کیا جائے اور سرکاری گودام سے سبسیڈی ریٹ پر گندم عوام کو دیا جائے۔
مقررین نے کہا کہ اس سردی کے موسم میں بکراباد چترال کے مقام پر ناقص طور پر بلیک ٹاپنگ کی جارہی ہے عوام سے مطالبہ ہے کہ ایسے کاموں پر نظر رکھیں۔
امیر جماعت اسلامی لوئرچترال مولانا جمشید احمد نے کہا کہ انتظامیہ نے ہمارے ساتھ وعدہ کیا تھا کہ چترال آٹاملز کے اٹا مختلف سیل پوائنٹ کے زریعے عوام کو دیا جائے گا۔لیکن ابھی تک اس پر عمل نہیں کیا گیا انتظامیہ نے ہمارے ساتھ دھوکہ کیا ہے۔انہوں نے مطالبہ کیا ک ہمیں اٹا نہیں چاہیے بلکہ ہمیں سرکاری گودام سے گندم دیا جائے ورنہ ہم بھرپور احتجاج کریں گے۔انہوں نے ایس ڈی او پیسکوچترال کو اگاہ کرتا کرتے ہونے کہا کہ جن کے اوپربجلی کے بقایا جات ہیں ان کا کنکشن کاٹ دی جائے اور چترال شہر کے اندر اور اپر چترال میں فوری طور پر بجلی کی لوڈشیڈنگ کو ختم کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت نے چترال کے روڈون پر کام کو بند کیا ہے ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ بمبوریت ایوں روڈ،چترال شندور روڈ اور چترال دروش روڈ پر فوری طور پر کام کا اغاز کیا جائے۔ورنہ ہم چترال کے اندر بھرپور طور پر احتجاج کریں گے۔اخر میں ایک قرارداد پاس کی گئی۔جلسے سے  نائب امیر خان حیات اللہ خان،جنرل سیکرٹری جماعت اسلامی وجہہ الدین،ڈپٹی جنرل سیکرٹری شجاع الحق بیگ،صدر یوتھ ضیا الرحمن ،پاکستان مسلم لیگ (ن)  کےصفت زرین ودیگر نے بھی خطاب کیا

اس خبر پر تبصرہ کریں۔ چترال ایکسپریس اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں
زر الذهاب إلى الأعلى
error: مغذرت: چترال ایکسپریس میں شائع کسی بھی مواد کو کاپی کرنا ممنوع ہے۔